search
cross icons
cross icons

ذیل میں الفاظ کے معنی کی تفصیل بیان کی گئی ہے، ان الفاظ کے یہی معنی سمجھے جائیں گے، تاوقتیکہ ان کے ساق و سباق کی ضرورت نہ ہو:

"اکاؤنٹ" کا مطلب ہے بینک اکاؤنٹ جو کارڈ ہولڈر کے نام پر بنایا گیا ہے یا بینک کے پاس کھلوایاگیا ہے (چاہے وہ مکمل طور پر ہو یا کسی دوسرے شخص کے ساتھ) ، جس کی مناسب تعداد کارڈ ہولڈرکے لیے کارڈ کے درخواست فارم میں دی گئی ہے یا دی جائے گی۔

"اکاؤنٹ ہولڈر" سے مراد وہ شخص/اشخاص ہیں جو بینک کے ساتھ ایک یا ایک سے زائد اکاؤنٹ برقرار رکھےگا/گے

"ایپلیکیشن" سے مراد اکاؤنٹ ہولڈر کی جانب سے کی جانے والی کوئی بھی درخواست، ہدایت یا عرضی ہے جو سپلیمینٹری کارڈ کے حصول یا اسی قسم کے کسی دوسرے مقصد کیلئے وقتاً فوقتاً بینک کو کی جاتی رہے گی۔

اے ٹی ایم یا اے ٹی ایم مشین سے مراد آٹو میٹڈ ٹیلر مشین ہے جو بینک کے زیر انتظام پاکستان میں یا باہر ایسی خود کار مشین ہیں جو بین الاقوامی نظام سے منسلک ہو یا / اور خود کار مشین جو بیرون ملک میں بینکوں اور مالیاتی اداروں میں نصب ہوں ، جہاں VISA کارڈقابل قبول ہو تاہے ۔

"بینک" کا مطلب ہے موبی لنک مائیکرو فنانس بینک لمیٹڈ ، ایک بینکاری کمپنی جو پاکستان کے قوانین کے تحت کام کرتی ہے اور اس کا رجسٹرڈ آفس پلاٹ نمبر 3-A/2 ، F 8 مرکز ، اسلام آباد میں ہے اور اس میں بینک کے نام اور فائدہ سے منسوب کامیاب لوگ بھی شامل ہیں۔

"کارڈ" کا مطلب ہے ویزا کلاسک پلس اور ویزا کلاسک کارڈ جو بینک کی طرف سے کارڈ ہولڈرز کو جاری کیا جاتاہے اور یہاں موجود شرائط و ضوابط میں VISA کا لوگو موجودہے۔

"کارڈ ہولڈر" کا مطلب ہے "اکاؤنٹ ہولڈر" جو بینک میں اکاؤنٹ کھلواتا ہے اور جس کو ویزا ڈیبٹ کارڈ جاری کیا جاتا ہے اور جس کے پاس اسے چلانے کا اختیار ہوتا ہے۔

کارڈ ٹرانزیکشن سے مراد کارڈ ہولڈر کی جانب سے کارڈ کے ذریعے پیمنٹ کرنا کرنا یا کیش ودڈرال کرنا ہے۔ جس میں بینک کی لاگو کردہ فیس بھی شامل ہو گی ، جس کے بعد کارڈ ٹرانزیکشن کی اصطلاح کا مناسب مطلب اخذ کیا جائیگا ۔

"لنکیج اکاؤنٹس" سے مراد وہ اکاؤنٹس ہیں جو بینک ٹرانزیکشن یا دیگر سروسزکے مقصد کے لیے اکاؤنٹس ہولڈر کی درخواست پر کارڈ سے منسلک ہوتے ہیں۔

"EFT" کا مطلب الیکٹرانک فنڈ ٹرانسفر ہے جس میں مرچنٹ کی پیمنٹ کو چھوڑ کر تمام الیکٹرانک ٹرانزیکشنز شامل ہیں۔

لنک نیٹ ورک سے مراد وہ 1-LINK یا MNETسسٹم ہے جوکارڈ کو قبول کرتا ہو اور یا دیگر ان تمام نیٹ ورکس کو قبول کرتا ہو ، بینک جن کا رکن ہے۔

"مرچنٹ سروس/ ریٹیل آؤٹ لیٹس" کا مطلب ہے پاکستان میں واقع مرچنٹس کا کوئی سروس یا ریٹیل آؤٹ لیٹ

پاکستان سے مراد اسلامی جمہوریہ آف پاکستان ہے پن سے مراد ذاتی شناخت کا وہ مخصوص خفیہ نمبر ہے جو بینک کی جانب سے کارڈ ہولڈر کو فراہم کیا جاتا ہے ، اور جسے کارڈ ہولڈر وقتا فوقتا منتخب کرتا رہتا ہے اور جسے کارڈ ہولڈر اے ٹی ایم سے کیش ودڈرال کروانے، اے ٹی ایم سے ٹرانزیکشنز کرنے ان آؤٹ لیٹس سے بلا دستخط خریداری کرنے جہاں پی او ایس ٹرمینل کے ذریعے پن کی شناخت کرنے کی سہولت موجود ہو کے علاوہ وقتا فوقتا اے ٹی ایم کے ذریعے دیگر سہولیات حاصل کرنے کیلئے استعمال کریں گے۔

"پی او ایس ٹرمینل "سے مراد مرچنٹ سروسز/ریٹیل آؤٹ لیٹس پر فراہم کردہ الیکٹرانک ٹرمینلزہیں جو کارڈ ہولڈر کو اس قابل بناتے ہیں کہ وہ بینک کے پاس موجود اکاؤنٹ یا منسلک فنڈز تک رسائی حاصل کر تے ہوئے اپنی خریداری کر سکے

روپے کا مطلب پاکستان کی قانونی کرنسی ہے "سٹیمنٹ آف اکاونٹ "سے مراد وہ مدتی تفصیل ہے جو بینک کی جانب سے کارڈ ہولڈر کو فراہم کی جائیگی ، جسمیں دیگر تفصیلات کے علاوہ اس عرصہ کے دوران کی جانیوالی ٹرانزیکشنز کی تفصیل موجود ہو گی ۔ "سروسز "سے مراد وہ خدمات ہے جو کارڈ کو بطور اے ٹی ایم کارڈ کے استعمال کر کے حاصل کی جائے یا بطور ڈیبٹ کارڈ پیمنٹ کرنے کے لئے استعمال کی جائیں ، انفرادی طور پر بینک کی جانب سے بذریعہ انٹرنیٹ بینکاری یا دیگر سروسز کی صورت میں وقتا فوقتا فراہم کی جائیں گی۔

چارجز کا شیڈول:چارجز کا شیڈول بینک کی برانچز اور بینک کی مندرجہ ذیل ویب سائٹ پر دستیاب ہے:www.mobilinkbank.com.pk "

"شرائط و ضوابط" سے مراد وہ شرائط ہیں جو کارڈ اورسروسز کے استعمال کو کنٹرول کرتی ہیں۔ "نیٹ بینکنگ" کا مطلب ہے انٹرنیٹ بینکنگ کی سہولت جو بینک نے کارڈ ہولڈر کو درج ذیل ویب سائٹ کے ذریعے فراہم کی ہے:www.mobilinkbank.com.pk

.1 کارڈ صرف نئے اکاونٹ کھولنے کی صورت میں جاری کیا جائیگا ، یا ایسے فرد کو جاری کیا جائے گا جسکا اکاونٹ پہلے سے موجود ہو ، اکاونٹ ہولڈر کی جانب سے کارڈ حصول کی درخواست کو بینک ایک ایسی پیشکش تصور کریگا جس کے تحت اگر بہتر سمجھے تو اپنی صوابدید کے مطابق درخواست کو منظور کر سکتا ہے ، یہ درخواست اور پیشکش مروجہ قوائد و ضوابط کے مطابق ہو گی ۔

.2 کارڈ ہولڈر کی درخواست پر کارڈ ہولڈر اپنا کارڈ بینک سے وصول کر سکتا ہے ، یا بینک اپنی صوابدید پر بذریعہ کورئیر کارڈ ہولڈر کو ارسال کر سکتا ہے ۔ یہ تمام کارروائی مروجہ بینک قوائد و ضوابط کے تحت عمل میں لائی جائیگی ۔

.3 کارڈ ہولڈر اپنا کارڈ متعلقہ شاخ سے خود وصول کر سکتا ہے ، یا بینک کے ریکارڈ میں موجود پتہ پر ارسال کیا جا سکتاہے ، کورئیر کے ذریعے کے ذریعے ارسال کئے جانے کی صورت میں تمام تر ذمہ داری کارڈ ہولڈر کی ہو گی ، تجدید شدہ اور متبادل کارڈ بینک میں موجود آخری پتہ پر ارسال کئے جایئنگے ، جسکی ذمہ کارڈ ہولڈر پر ہو گی

.4 کارڈ وصول کرنے کے فوراً بعد کارڈ پر موجود مخصوص مقام پر دستخط کرنا ضروری ہے۔ کارڈ کا بعد ازاں استعمال کارڈ ہولڈر کے دستخط کی تصدیق اور مذکورہ شرائط و ضوابط کے مطابق ممکن ہوگا۔

.5 کارڈ کو کارآمد یا فعال بنانے کیلئے کارڈ ہولڈر کو بینک سے رابطہ کرنا ہوگا۔ بینک ،کارڈ ہولڈر کے کوائف کی تصدیق کرنے کے بعد کارڈ کو فعال کرے گا۔

.6 کارڈ کے کارآمد رہنے کی مدتِ میعاد کارڈ کے سامنے کی جانب درج ہوگی۔ کارڈ کی مدت پوری ہونے پر کارڈ ہولڈر کیلئے لازم ہے کہ وہ کارڈ کو درمیان میں مقناطیسی پٹی کے مقام سے کاٹ کر ضائع کردے۔ کارڈ کی میعاد پوری ہونے پر بینک اپنی مکمل صوابدید پر نیا کارڈ جاری کر سکتا ہے ، ماسوائے اس صورت کہ کارڈ ہولڈر اس کے برعکس چاہے۔ بحرصورت ، کارڈ ہولڈر کو ان شرائط و ضوابطِ اور اس میں ہونی والی ترامیم پر بدستور عمل کرتے رہنا ہوگا۔

.7 کارڈ بینک کی ملکیت رہے گا، یہی وجہ ہے کہ کارڈ ہولڈر اس صورت میں کارڈ کا استعمال نہیں کرے گا، اگر اسے بینک ، ا مجاز افسر، بینک ملازم ، معاون یا بینک کا کوئ ایجنٹ کسی بھی وجہ سے کارڈ کا استعمال بند کرنے کی تاکید کردے ۔ بینک ، مجاز افسر، بینک ملازم ، معاون یا بینک کا کوئ ایجنٹ کارڈ ہولڈر کو یہ تاکید بھی کرسکتا ہے کہ وہ اپنا کارڈ بینک کے حوالے کردے۔ ایسی ہدائیت ملنے پر کارڈ ہولڈر کو اپنا کارڈ فوراً واپس کرنا ہوگا۔

.8 بینک کی جانب سے کسی بھی وجہ سے کارڈ بند کر دیئے جانے کی صورت میں یا اس پر فراہم کردہ سہولیات واپس لے لئیے جانے یا ان سہولیات کو منسوخ کردئیے جانے کی صورت میں کارڈ ہولڈر کو فوراً اپنا ایک یا ایک سے زائد کارڈ بینک کو واپس کرنا ہوں گے ۔ ایسے کارڈ کی مدت ، کارڈ کی سہولیات بند ہوجانے یا اس سے منسلک بینک اکاؤنٹ کو غیر فعال کر دئیے جانے والے روز سے منسوخ قرار پائیں گی ۔

.1 بینک ، صریحاً اپنی صوابدید پر کارڈ ہولڈر کو درجِ ذیل سروسز و سہولیات استعمال کرنے کے قابل بنائے گا:

i بطور اے ٹی ایم کارڈ پاکستان بھر میں قائم اے ٹی ایم پر استعمال کیلئے

ii پاکستان بھر میں ، مرچنٹ سروسز /ریٹیل آؤٹ لیٹس پر خریدی گئی اشیاء کی پیمنٹ کیلئے (ڈیبٹ کارڈ)جہاں جہاں پر ویزا قابلِ قبول ہو استعمال کیا جاتا ہے

iii بینک کی جانب سے کارڈ ہولڈر کو فراہم کی جانے والی کسی بھی اضافی سہولت کیلئے

.2 درخواست کئے جانے کی صورت میں بینک اگر چاہے تو اپنی صوابدید پر کسی ایسے شخص کو منظوری کے بعدسپلیمینٹری کارڈ جاری کر سکتاہے جسے کارڈ ہولڈر نامزد کرے۔ تما م سپلیمنٹری کارڈ بشمول نئے تجدید شدہ اور نئے جاری کردہ کارڈ متعلقہ بینک برانچ سے ذاتی طور پر وصول کئے جائیں گے یا پھر شق 2.4 کے تحت کارڈ ہولڈر کے بینک ریکارڈ کے مطابق آخری معلوم پتہ پر ارسال کئے جائیں گے ، جس کی تمام تر ذمہ داری کارڈ ہولڈر پر ہوگی۔سپلیمنٹری کارڈ ہولڈر کارڈ وصول کرتے ہی فوری طور پر دستخط والی جگہ پر دستخط کرے گا ، جبکہ کارڈ کا استعمال شرائط و ضوابط کو قبول کر لینے کی تصدیق تصور ہوگا۔ سپلیمنٹری کارڈ جاری ہونے کی صورت میں اصل کارڈ ہولڈر جو کہ اکاؤنٹ ہولڈر بھی ہوگا، سپلیمنٹری کارڈ کے ذریعے کئے جانے والے فنڈٹرانسفر، پیمنٹس، چارجز اور دیگر اخراجات کا کُلی طور پر ذمہ دار ہوگا یا/اور سپلیمنٹری کارڈ کی پیمنٹ کرے گا۔

.3 صرف کارڈ ہولڈر اپنے کارڈ کو استعمال کرنے کا مجاز ہے۔ کارڈ ہولڈر اپنا کارڈ کسی تیسرے شخص کے حوالے نہیں کرے گا اور ہر مکمن اقدامات کرے گا کہ وہ کا رڈ کو محفوظ مقام پر رکھے تاکہ کارڈ کے لاپتہ، گم یا چوری ہونے کا امکان نہ ہو۔کارڈ لاپتہ، گم یا چوری ہوجانے یا کارڈ کسی تیسرے فرد کے ہاتھ میں چلے جانے کی صورت میں کارڈ ہولڈر فوری طور پر تحریری شکل میں یا بذریہ ٹیلیفون بینک کی ہیلپ لائن کو مطلع کرکے کارڈ کو غیر فعال کرنے کی ہدایت کرے گا تاکہ کارڈ کو مزید استعمال میں نہ لایا جاسکے۔ کارڈ کو غیر فعال کرنے اور مزید استعمال کو روکنے کی ہدایت موصول ہونے پر بینک اس کی تصدیق کرے گا جو کارڈ ہولڈر کیلئے حتمی ہوگی ۔ بینک اپنی مکمل صوابدید پر یہ حق محفوظ رکھتا ہے کہ وہ زبانی یا الیکٹرانک ذرائع اور بعد ازاں تحریری طور پر موصول ہونے والی ہدایت پر عمل کرتے ہوئے کارڈ کو غیر فعال بنا کر اس کے مزید استعمال کو روک دے۔ تاہم، قطع نظر اس کے، اس سلسلے میں بینک سٹاف کی جانب سے کسی بھی قسم کی نظر اندازی کی صورت میں پیدا ہونے والے نتائج کی تمام تر ذمہ داری کارڈ ہولڈر پر ہوگی۔

.4 کارڈ ہولڈر اپنے کارڈ کے ذریعے اس سے منسلک اکاؤنٹ سے کئے جانے والے تمام فنڈ ٹرانسفر اور پیمنٹس کو قبول کرے گا، ماسوائے کارڈ کے لاپتہ، گم یا چوری ہوجانے پر بذریعہ ٹیلیفون بینک ہیلپ لائن کو زبانی اطلاع اور بعد ازاں تحریری اطلاع کے ذریعے کارڈ کو غیر فعال بنا دینے کی ہدایت کرنے اور بینک کی جانب سے اس ہدایت کی تصدیق ہوجانے کے بعد ہونے والے فنڈ ٹرانسفر کے۔جس وقت بینک کو کارڈغیر فعال کرنے اور مزید استعمال کو روکنے کی ہدایت موصول ہوگی، بینک اس کی تصدیق کرے گا جو کارڈ ہولڈر کیلئے حتمی ہوگی۔بینک اپنی صوابدید پر یہ حق محفوظ رکھتا ہے کہ وہ زبانی یا الیکٹرانک ذرائع سے موصول ہونے والی ہدایت اور اس کی تصدیق کیلئے بینک کی جانب سے کارڈ ہولڈر کو کی جانے والی کال اور تحریری گزارش پر عمل کرتےہوئے کارڈ کو جلد از جلد غیر فعال کر دے۔ تاہم، قطع نظر اس کے، اس سلسلے میں بینک سٹاف کی جانب سے کسی بھی قسم کی نظر اندازی کی صورت میں پیدا ہونے والے نتائج کی تمام تر ذمہ داری کارڈ ہولڈر پر ہوگی۔

.5 کارڈ ہولڈر ایک مرتبہ فنڈ ٹرانسفرمکمل ہوجانے کے بعد اپنے کارڈ سے کئے جانے والے فنڈز ٹرانسفر کو منسوخ نہیں کرسکتا، ماسوائے ان شرائط و ضوابط کے۔ کارڈ ہولڈر کارڈ کے ذریعےکی جانے والی ٹرانزیکشنز کی تمام تر رسیدیں/سلپ محفوظ رکھے گا اور طلب کرنے پر بینک کو پیش کرے گا۔

.6 کارڈ ہولڈر اس بات پر متفق ہے اور بینک کو یہ اجازت دیتا ہے کہ بینک کارڈ سے منسلک ایک یا ایک سے زائد اکاؤنٹ سے کارڈ کے زریعے سے کی جانے والی پیمنٹس کے علاوہ بینک اچارجز، فیس،ریٹس، کٹوتیاں اور نقصانات وغیرہ وقتاً فوقتاً وصول کر سکے۔

.7 بینک ، مرچنٹس سروسز/ریٹیل آؤٹ لیٹس سے کارڈ کے ذریعے کئے جانے والے فنڈز ٹرانسفرکی اطلاع موصول ہوتے ہی فوراً اکاؤنٹ سے وصولی کر لے گا۔ کارڈ کے ذریعے فنڈز ٹرانسفر کرنے کے بعد متعلقہ اکاؤنٹ سے رقم وصولی میں تاخیر کی صورت میں بینک ذمہ دار ہوگا۔کارڈ ہولڈر ، کارڈ کے ذریعے کئے جانے والے فنڈز ٹرانسفر کی اپنے بینک اکاؤنٹ سے ادائیگی کرنے کا پابند ہوگا۔ یہ پابندی کارڈ سے منسلک اکاؤنٹ بند کردئیے جانے کے بعد بھی قائم رہے گی۔

.8 اگر مرچنٹ سروسز/ ریٹیل آؤٹ لیٹ کارڈ کے ذریعے کی جانے والی ادائیگی کی رقم واپس کرتا ہے تو بینک مرچنٹ سروسز/ ریٹیل آؤٹ لیٹ سےمکمل ہدایات موصول ہونے کے بعد یہ رقم متعلقہ اکاؤنٹ میں جمع کردے گا۔ اس حوالے سے مرچنٹ سروسز/ ریٹیل آؤٹ لیٹ کی جانب سے دیر سے ہدایات موصول ہونے کے باعث رقم کی واپسی میں ہونے والی تاخیر کا بینک ذمہ دار نہیں ہوگا۔

.9 کارڈ ہولڈر اپنا کارڈ استعمال کرنے سے پہلے اس بات کو یقینی بنائے گا کہ کارڈ سے منسلک اکاؤنٹ میں وافر رقم موجود ہو۔ اگر کسی بھی وجہ سے کارڈ یا سپلیمنٹری کارڈ ہولڈر کارڈ سے منسلک اکاؤنٹ سے زائد رقم استعمال کرے گا تو کارڈ ہولڈر کی جانب سے بینک کو یہ اجازت ہوگی کہ وہ مارک اپ یا/اور سروس چارجز ، بینک کے وقتاً فوقتاً لاگو کردہ ضابطہِ وصولیات کے مطابق منہا کر سکے۔کارڈ ہولڈر فوری طور پر زائد رقم ادا کرے گا۔بینک کسی وقت، بغیر کسی نوٹس کے کارڈ کو منسوخ کرنے اور کارڈ کے ذمہ زائد واجب الادا رقم کا بلا تعصب اپنے جائز قانونی حق کے مطابق تقاضا کرنے کا مجاز ہے اور جس میں زائد حاصل کی گئی رقم، مارک اپ اور اٹھنے والے دیگر نقصانات شامل ہوں گے۔

.10 سروسز/ ریٹیل آؤٹ لیٹ یا اے ٹی ایم کی جانب سے کارڈ قبول نہ کئے جانے کی صورت میں ہونے والے نقصان کا بینک ذمہ دار نہیں ہوگا۔

.11 اے ٹی ایم کی اسکرین پر نظر آنے والی یا فنڈز ٹرانسفرکی رسید/سلپ پر درج رقم کو کسی بھی طرح سے کارڈ ہولڈر کے اکاؤنٹ میں موجود درست اصل رقم تصور نہیں کیا جائے گا۔ صرف وہ تمام فنڈز ٹرانسفرز درست شمار کی جائیں گی جو وقتاً فوقتاً بینک کی جانب سے جاری کردہ اکاؤنٹ کی تفصیل (سٹیٹمنٹ) کی صورت میں مہیاء کی جائیں گی اور بینک کے ریکارڈ میں موجود ہوں گی۔

.12 کارڈ ہولڈر اپنے کارڈ کے ذریعے کئے جانے والےتمام تر فنڈز ٹرانسفر کی مکمل ذمہ داری اٹھائے گا ، خواہ یہ ٹرانسفرز اس کے علم اور مرضی سے ہوں یا اس کے علم میں لائے بغیر اس کی مرضی کے بغیر کی گئی ہوں۔کارڈ ہولڈر بینک کی جانب سے فراہم کردہ فنڈز ٹرانسفر کی تفصیلات کو حتمی طور پر قبول کرے گا جو الیکٹرانک یا دیگر زرائع سے فراہم کی گئی ہوں۔

.13 بینک یہ حق محفوظ رکھتا ہے کہ وہ کسی بھی وقت، بلا کسی پیشگی اطلاع کے ، کسی بھی عرصہ کیلئے کارڈ ہولڈر کے اے ٹی ایم سے رقم حاصل کرنے کی کُل لمٹ میں اضافہ یا کمی کر سکتا ہے۔ بینک یہ حق بھی محفوظ رکھتا ہے کہ کارڈ کے ذریعے پی او ایس ٹرمینل پر پیمنٹس کی لمٹ میں کمی یا اضافہ کر سکتاہے۔ روازنہ کیش ود ڈرال کی کم سے کم /زیادہ سے زیادہ لمٹ مختلف بینکوں سےتعلق رکھنے والے اے ٹی ایم پر مختلف ہوتی ہے۔ ان حدود کا علم نہ ہونے اور مختلف اے ٹی ایم پر کیش ودڈرال کی حدود یکساں نہ ہونے کے باعث کسٹمرز کو درپیش کسی بھی نقصان کی ذمہ داری بینک پر عائد نہیں ہوگی۔

.14 اگر کارڈ ہولڈر کومرچنٹ سروسز/ ریٹیل آؤٹ لیٹ سے شکایت یا دیگر تحفظات ہوں تولازم ہے کہ کارڈ ہولڈر ان شکایات کو مرچنٹ سروسز/ ریٹیل آؤٹ لیٹ سے بذاتِ خود حل کرے۔اس حوالے سے بینک پر کوئ ذمہ داری عائد نہیں ہوتی کہ وہ ایسی شکایات یا تحفظات کا ازالہ کرے۔

کارڈ ہولڈر ، ہیلپ لائن پر کال کرکے اپنے کارڈ کی نئی پن تخلیق کرسکتا ہے اور اپنی اے ٹی ایم پن تبدیل بھی کر سکتاہے۔ ہیلپ لائن پر موجود ایجنٹ تصدیق کرنے کے بعد اس عمل کی رہنمائ کریں گے۔ پن کی رازداری نہایت ضروری ہے، کارڈ ہولڈر کسی کو بھی اپنا پن نہیں بتائے گا۔ اگر کارڈ ہولڈر مکمل رازداری نہ نبھا سکا تو تمام تر نتائج کا ذمہ دار وہ خود ہوگا۔ اگر پن کو کارڈ کے ساتھ ہی رکھا گیا تو چوری یا گم ہونے کی صورت میں پن کے ذریعے کی کئے جانے والے تمام تر فنڈز ٹرانسفر کا ذمہ دار کارڈ ہولڈر خود ہوگا۔

.1 ان کارڈ ہولڈر ز کو انٹرنیٹ بینکنگ کی سہولت دستیاب ہوگی جو اپنے کارڈ سے منسلک بینک اکاؤنٹس پر الیکٹرانک ذرائع سے فنڈز ٹرانسفر کرنے یعنی EFT سروسز حاصل کرنے کے لئے رضا مند ہوں

.2 انٹرنیٹ بینکنگ سروسز حاصل کرنے کیلئے لازم ہے کہ کارڈ ہولڈر بینک کے ساتھ رجسٹرڈ ہو

.3 ابتداء میں بینک کارڈ ہولڈر کو لاگ ان پاس ورڈ اور شناختی کوڈ فراہم کرے گا جسے استعمال کرکے کارڈ ہولڈر انٹر نیٹ بینکنگ کی سہولیات تک رسائی حاصل کر سکے گا

.4 کارڈ ہولڈر کیلئے لازم ہے کہ وہ پاس ورڈ اور شناختی کوڈ کی حفاظت کرے اور اسے باقاعدگی سے تبدیل کرتا رہے۔ اس کے علاوہ جب بھی انٹر نیٹ بینکنگ سروسز پاس ورڈ اور شناختی کوڈ تبدیل کرنے کو کہیں، فوراً ایسا کرے۔

.5 کارڈ ہولڈر اس بات سے اتفاق کرتا ہے اور بینک کو یقین دہانی کرواتا ہے کہ وہ انٹرنیٹ بینکنگ سروسز استعمال کرنے کے دوران کسی بھی نقصان، کٹوتی، ڈیمانڈ، قیمت ، لائبیلٹی وغیرہ کا ذمہ دار بینک کو نہیں ٹھہرائے گا جو انٹرنیٹ بینکاری کے باعث پیش آئیں

.6 بینک ،انٹر نیٹ بینکنگ سروسز کے حوالے سے جاری کردہ ہدایات پر عمل دراآمد کی یقین دہانی نہیں کرواتا ، نہ ہی اس کی ذمہ داری اٹھاتا ہے، خواہ ایسی ہدایات کارڈ ہولڈر کی اجازت کے بغیر ہی کیوں نہ جاری کی گئی ہوں

.1 EFT سروسزکسٹمرزکی رضامند ی کے بعد فراہم کی جائیں گی

.2 EFT سروسز سے فائدہ اٹھانے کا ایک طریقہ ِ کار ہے

.3 نئے کسٹمرز کیلئے EFT کیلئے رضامندی کو اکاؤنٹ کھولنے کے فارم میں شامل کر دیا گیا ہے

.4 پہلے سے موجود کسٹمرز کو قریبی بینک برانچ پر آکر، بائیو میڑک تصدیق کے بعد رضامندی فراہم کرنا ہوگی

.5 کسٹمر اس بات سے اتفاق کرتا ہے اور بینک کو یقین دہانی کرواتا ہے کہ وہ EFT سروسز استعمال کرنے کے دوران کسی بھی نقصان، کٹوتی، ڈیمانڈ، قیمت ، لائیبیلٹی وغیرہ کا ذمہ دار بینک کو نہیں ٹھہرائے گا جو انٹرنیٹ بینکنگ کے باعث پیش آئیں۔

.6 بینک ، EFT سروسز کے حوالے سے جاری کردہ ہدایات پر عملدرآمد کی یقین دہانی نہیں کرواتا ، نہ ہی اس کی ذمہ داری اٹھاتا ہے، خواہ ایسی ہدایات کارڈ ہولڈر کی اجازت کے بغیر ہی کیوں نہ جاری کی گئی ہوں۔

.7 EFT کی موجودہ لمٹس نیچے دی گئی ہیں:

چینل ای ایم وی ویزا کلاسک کور (روزانہ فنڈ ٹرانسفر کی لمٹ) ای ایم وی ویزا کلاسک پلس (روزانہ فنڈ ٹرانسفر کی لمٹ)

اے ٹی ایم

250،000

500،000

انٹرنیٹ بینکاری

250،000

500،000

موبائل ایپ

250،000

500،000

کارڈ ہولڈر بینک کو لکھے گا اگر کارڈ ہولڈر کا خیال ہے کہ اکاؤنٹ سٹیٹمنٹ کسی بھی معاملے میں غلط ہے، یا اگر کارڈ ہولڈر کو یقین ہے کہ کارڈ میں کوئی غلطی ہوئی ہے، اگر کارڈ ہولڈر کو کسی ٹرانزیکشن کے بارے میں مزید معلومات کی ضرورت ہے۔ اکاؤنٹ سٹیٹمنٹ، کارڈ ٹرانزیکشن کے سات (7) دنوں کے اندر یا اکاؤنٹ سٹیٹمنٹ کی رسیدکارڈ ہولڈر تمام تفصیلات تحریری نوٹس کے ساتھ فراہم کرے گا تاکہ بینک اس معاملے کی تحقیقات کر سکے۔ کارڈ ہولڈر بینک کو درکار مزید معلومات فراہم کرے گا۔ تمام متعلقہ معلومات کی وصولی کے بعد بینک معاملے کی چھان بین کرے گا اور بینک کے نتائج تمام مقاصد کے لیے حتمی اور پابند ہوں گے۔

کارڈ ہولڈر کو بینک کی طرف سے بھیجی گئی اکاؤنٹ سٹیٹمنٹ سے ٹرانزیکشنز کے ریکارڈز کو متعین فریکوئنسی کے مطابق چیک کرنا چاہیے یا یہ سروس انٹرنیٹ بینکنگ کے ذریعے اور کارڈ یا بائیو میٹرک کا استعمال کرتے ہوئے اے ٹی ایم سے منی سٹیٹمنٹ کے ذریعے حاصل کی جاسکتی ہے۔ کارڈ ہولڈر ٹرانزیکشنز یا سٹیٹمنٹ جاری کرنے کے 7 دنوں کے اندر بینک کو تحریری طور پر مطلع کرے گا، جو بھی بعد میں ہو، اگر اکاؤنٹ کی ٹرانزیکشنز کی تفصیلات میں یا اکاؤنٹ سٹیٹمنٹ میں کوئی بے ضابطگی یا تضاد موجود ہے جو بینک کارڈ ہولڈر کو بھیجتا ہے۔ اگر بینک کو 7 دنوں کے اندر اس کے برعکس کوئی اطلاع موصول نہیں ہوتی ہے، تو بینک یہ فرض کرنے کا حق رکھتا ہے کہ تمام ٹرانزیکشنز درست ہیں اور اسے تمام مقاصد کے لیے حتمی ثبوت کے طور پر سمجھا جا سکتا ہے۔ اس کے علاوہ، اس صورت میں کہ کارڈ/بائیو میٹرک کا استعمال کسی بھی اے ٹی ایم پر کیا گیا ہو یا کارڈ کو قابل اجازت ڈیجیٹل چینلز کے ذریعے آن لائن استعمال کیا گیا ہو اور کارڈ ہولڈر کو ٹرانزیکشن کے کامیابی سے مکمل ہونے کے باوجود کم ادائیگی یا کوئی ادائیگی نہ ہو، اسے بینک کو مطلع کرنا چاہیے۔ غیر قانونی ٹرانزیکشن کے 7 کاروباری دنوں کے اندر تحریری طور پر، بصورت دیگر بینک کے اکاؤنٹ اور ریکارڈ کی سٹیٹمنٹ کو معاملے کا حتمی تصور کیا جائے گا۔ مزید برآں، اگر کارڈ ہولڈر کسی بھی اے ٹی ایم پر کارڈ کا استعمال کرتا ہے جو بینک کے ذریعے نہیں چلایا جاتا ہے، تو بینک کو 1-Linkسوئچ کے ذریعے فراہم کردہ ریکارڈز اور بینک کی طرف سے کسی کوتاہی یا ناکامی پر انحصار کرنے کا حق ہوگا۔ عصری طور پر کارڈ ہولڈر کے ذریعہ کسی بھی ٹرانزیکشن کے لئے کارڈ ہولڈر کے اکاؤنٹ سے ڈیبٹ کرنا بینک کسی بھی بعد کی تاریخ کو کارڈ ہولڈر کے پیشگی حوالہ کے بغیر براہ راست ڈیبٹ کے ذریعہ مکمل کرسکتا ہے۔

.1 بینک کارڈ کے سلسلے میں ہر کارڈ ہولڈر سے بینک کے چارجز کے شیڈول کے مطابق چارج کرے گا

.2 بینک کے ATMs یا لنکڈ نیٹ ورک ATMs کے استعمال کے چارجز بینک کے چارجز کے شیڈول (جہاں قابل اطلاق ہوں) کے مطابق مانے جائیں گے۔

.3 کارڈ ہولڈر تمام ٹیکسز، لیویز، ڈیوٹی یا اخراجات کی ادائیگی کے لیے ذمہ دار ہوگا جو کارڈ کے اجراء اور استعمال کے سلسلے میں متوجہ ہوسکتے ہیں

.1 بینک کو کارڈ یا کسی بھی سروسز کے سلسلے میں سروسز فراہم کرنے سے روکنے یا تاخیر کرنے کے نتیجے میں ہونے والے کسی نقصان کے لیے بینک ذمہ دار یا ذمہ دار نہیں ہوگا۔

.2 بینک کارڈ یا اے ٹی ایم یا پی او ایس ٹرمینل کی کسی بھی خرابی، یا کسی بھی تکنیکی یا غیر تکنیکی خرابی یا کسی اے ٹی ایم اور/یا اس کے کسی بھی حصے یا عارضی طور پر خرابی سے ہونے والے کسی نقصان یا نقصان کا ذمہ دار یا ذمہ دار نہیں ہوگا۔ یا کسی بھی وجہ سے کارڈ، اے ٹی ایم یا پی او ایس ٹرمینل کے سلسلے میں کسی بھی سروس کی طویل عرصے تک عدم دستیابی، بشمول کسی بھی نوعیت کے تنازعہ کی وجہ سے بغیر کسی لمٹ کے اس کا ذمہ دار بھی بینک نہیں ہوگا ۔

.3 بینک کارڈ یا دیگر سروسز بشمول ہڑتال، جنگی کارروائیوں، بجلی کی فراہمی یا آلات کی خرابی یا بینک کے معقول کنٹرول سے باہر کوئی اور وجہ ،جس کی وجہ سے کسی بھی سروس کو فراہم کرنے سے روکنے یا اس میں تاخیر کے نتیجے میں ہونے والے کسی نقصان کا ذمہ دار یا ذمہ دار نہیں ہوگا۔

.4 کارڈ ہولڈر اس کے ذریعے بینک کو تمام کارروائیوں، دعووں، مطالبات، کارروائی کے نقصانات، نقصانات، ذاتی انکوائری، اخراجات، چارجز اور اخراجات سے اور ان کے خلاف ہرجانہ ادا کرنے اور رکھنے سے اتفاق کرتا ہے جو کہ بینک کسی بھی وقت برداشت کر سکتا ہے، اس کے نتیجے میں نقصان اٹھا سکتا ہے۔ کارڈ ہولڈر کو کارڈ کی سہولت فراہم کرنے کی وجہ سے یا بینکوں کے نیک نیتی سے کام کرنے اور کارڈ ہولڈر کی ہدایات پر کوئی کارروائی کرنے یا لینے سے انکار کرنے کی وجہ سے یا بصورت دیگر سروسز فراہم کر کے یا PIN گم، گمراہ یا چوری ہو جانے کی صورت میں کارڈ ہولڈر کی طرف سے ان شرائط و ضوابط کی خلاف ورزی کی صورت میں نقصان اٹھا سکتا ہے۔

.5 بینک کسی بھی طرح سے کارڈ ہولڈر کے ذریعے کارڈ کے استعمال سے خریدی گئی کسی بھی اشیا یا سروسز کے معیار، مقدار، کافی یا قابل قبولیت کے لیے ذمہ دار نہیں ہے یا کسی مرچنٹ سروس/ریٹیل آؤٹ لیٹ (زبانیں) کے ذریعے وصول کی گئی اضافی رقم کے لیے، یا کسی مرچنٹ سروس/ریٹیل آؤٹ لیٹ کے ذریعے کارڈ کی ٹرانزیکشنزکی خلاف ورزی پر۔ ایسی کسی بھی صورت میں یا کارڈ ہولڈر اور مرچنٹ سروس/ریٹیل آؤٹ لیٹ کے درمیان تنازعہ کی صورت میں، بینک پر کارڈ ہولڈر کی ذمہ داری کسی بھی طرح متاثر، کم یا معطل نہیں ہوگی۔

بینک اپنی صوابدید پر، کارڈ ہولڈر کو کارڈ، اے ٹی ایم، پی او ایس ٹرمینلز، اور/یا لنکڈ نیٹ ورک پر کارڈ ہولڈرز کی سہولت اور استعمال کے لیے مزید سروسز فراہم کر سکتا ہے۔ اس سے متعلق تمام فیس اور چارجز، جیسا کہ بینک وقتاً فوقتاً طے کرتا ہے اور کارڈ ہولڈر کے اکاؤنٹ یا لنکیج اکاؤنٹس میں ڈیبٹ کے ذریعے وصول کیا جائے گا۔ بینک اپنی صوابدید پر، کسی بھی وقت، کارڈ ہولڈر کو نوٹس دیئے بغیر، کارڈ اور/یا پاکستان کے اندر یا باہر کسی بھی قسم کی سروسز کو استعمال کرنے کی سہولت کو واپس لینے، بند کرنے، منسوخ کرنے، یا ختم کرنے کا حقدار ہے اور ایسا نہیں ہوگا۔ اس طرح کی معطلی یا برطرفی سے ہونے والے کسی نقصان یا کسی نقصان کے لیے کارڈ ہولڈر ذمہ دار نہیں ہو گا

.1 کارڈ ہولڈر اس کے ذریعے بینک کو کسی بھی وقت اور کسی بھی مقصد کے لیے، کوئی بھی معلومات جو کارڈ ہولڈر کی ذاتی تفصیلات، اکاؤنٹس، ٹرانزیکشنز یا بینک کے ساتھ معاملات، ہیڈ آفس یا کسی دوسری برانچز، ماتحت اداروں یا اس سے منسلک یا منسلک سے متعلق ہے، ظاہر کرنے کا اختیار دیتا ہے۔ بینک کے ادارے جہاں کہیں بھی ہوں؛ کوئی بھی حکومت یا ریگولیٹری ایجنسیاں یا اتھارٹیز پاکستان میں یا کہیں اورسےکوئی بھی ایجنٹ جنہوں نے بینک کے فائدے کے لیے کوئی بھی سروسز انجام دینے کے لیے کوئی معاہدہ کیا ہے: کریڈٹ انفارمیشن بیورو؛ بین الاقوامی ویزا نیٹ ورک کا کوئی رکن؛ اور کوئی بھی دوسرا شخص (شخص) جہاں قانون کے ذریعہ انکشافات کی ضرورت ہے یا بصورت دیگر جن کے لئے بینک ایسا انکشاف کرنا مناسب سمجھتا ہے۔ کارڈ ہولڈر بینک کی معلومات فراہم کرے گا جو قانون یا ضابطے کے تحت درکار ہے، یا کوئی دوسری معلومات جس کی بینک معقول طور پر وقتاً فوقتاً درخواست کر سکتا ہے۔ بینک کارڈ ہولڈر کی معلومات کو مجاز دائرہ اختیار کی کسی بھی عدالت، نیم عدالتی حکام، قانون نافذ کرنے والے اداروں اور کسی دوسرے متعلقہ اتھارٹی، یا بینک کے کاروبار کو چلانے والے کسی دوسرے شخص کے سامنے ظاہر کرنے کا حق محفوظ رکھتا ہے۔

.2 اگر کارڈ کے استعمال یا مطلوبہ استعمال، نقصان یا غلط استعمال سے کوئی دعویٰ یا تنازعہ پیدا ہوتا ہے، تو بینک ان فریقین کو ظاہر کر سکتا ہے جو کارڈ کے لین دین کے رازدار ہیں کسی مجاز حکام کو، اکاؤنٹ سے متعلق کوئی معلومات اور کسی دعوے یا تنازعہ کی چھان بین کے مقاصد کے لیے یا قرض جمع کرنے والی ایجنسیوں کی سروسز کے ذریعے بقایا رقم کی وصولی کے مقاصد کے لیے جو بینک اپنی واحد رائے میں ضروری سمجھتا ہے۔

.1 کارڈ کے استعمال کی شرائط و ضوابط جیسا کہ یہاں بیان کیا گیا ہے، یہ سمجھا جائے گا کہ کارڈ ہولڈر نے کارڈ کے درخواست فارم پر دستخط کرکے، یا کارڈ کے ریورس پر دستخط کرکے، یا کارڈ کے ساتھ کوئی بھی کارڈ ٹرانزیکشن کرکے غیر مشروط طور پر اس سے اتفاق کیا اور قبول کرلیا۔ کارڈ یا کارڈ کو فعال کرنے کے لیے بینک سے درخواست کر کے یا کارڈ بھیجنے کی تاریخ سے تین (3) دن کے بعد بینک کے ریکارڈ پر کارڈ ہولڈر کو آخری معلوم پتہ پر یہ شرائط و ضوابط کارڈ ہولڈر کے کسی بھی اکاؤنٹ سے متعلق شرائط و ضوابط کے علاوہ ہوں گے۔

.2 بینک کارڈ کی طرف سے پیش کردہ کسی بھی خصوصیت میں ردوبدل، ترمیم یا نظرثانی کرنے کا حق محفوظ رکھتا ہے اور ان شرائط و ضوابط میں سے کسی کو بھی تبدیل کر سکتا ہے اور کارڈ ہولڈر کو کسی بھی طریقے سے کارڈ کے استعمال کے لیے شرائط و ضوابط میں کسی بھی تبدیلی کے بارے میں مطلع کر سکتا ہے۔ بینک یہ مناسب سمجھتا ہےیا کسی دوسرے طریقے سے بینک مناسب سمجھے تو کارڈ ہولڈر کو کسی بھی تبدیلی کے پتے کے بارے میں بینک کو مطلع کرنا چاہیے۔ بینک کارڈ ہولڈر کو ان شرائط و ضوابط میں تبدیلی کا نوٹس بینک کی برانچز، اے ٹی ایم کی سائٹ پر یا اس کے آس پاس کے علاقے میں یا پریس اشتہار کے ذریعے یا کارڈ ہولڈر کے اکاؤنٹ سٹیٹمنٹ میں ایک پیغام کے ذریعے بھی دے سکتا ہے۔

کارڈ ہولڈر کی موت کی صورت میں قانونی ورثاء بینک کو مطلع کریں، اکاؤنٹ غیر مجاز ڈیبٹ ہونے کی صورت میں بینک ذمہ دار نہیں ہوگا۔

ان شرائط و ضوابط میں متضاد کسی بھی پروویژن کے باوجود، بینک کو کسی بھی وقت اور اپنی صوابدید پر یہ حق حاصل ہوگا کہ وہ کارڈ ہولڈر کے نام پر تمام یا کسی بھی اکاؤنٹ کو بغیر کسی پیشگی اطلاع کے یکجا، یکجا اور/یا ضم کر دے۔ کارڈ ہولڈر اور اس طرح کے انضمام، یکجا اور/یا انضمام کے حق میں کسی بھی قرض کو ایڈجسٹ کرنے یا ختم کرنے کا حق شامل ہوگا جو کارڈ ہولڈر بینک کے حق میں ہو سکتا ہے۔ اگر اس طرح کے انضمام، امتزاج یا انضمام کے بعد، بینک کے حق میں کوئی کمی یا کمی پیدا ہوتی ہے، تو کارڈ ہولڈر بینک کے پہلے مطالبے پر اسے فوری طور پر ادا کرنے کا پابند ہوگا۔

.1 بینک کی طرف سے تمام خط و کتابت، نوٹسز یا مطالبات، سروس کو نافذ کرنے کے لیے کسی دوسرے موڈ کے ساتھ تعصب کیے بغیر، درست سمجھے جائیں گے یا اگر کارڈ ہولڈر کو ذاتی طور پر پیش کیے گئے ہیں یا ٹیلیکس یا فیکس یا رجسٹرڈ میل/کورئیر کے ذریعے بھیجے گئے ہیں یا بھیجے گئے ہیں۔ بینک کے ریکارڈ کے مطابق کارڈ ہولڈر کا آخری معلوم پتہ اور اسے ڈلیوری کی اصل تاریخ پر جہاں ذاتی طور پر بھیجا گیا ہو یا رجسٹرڈ ڈاک کے ذریعے بھیجا گیا ہو، ڈسپیچ کے تین دن کے اندر اور پوسٹ کرنے کے اگلے دن، مناسب طریقے سے ڈیلیور اور موصول سمجھا جائے گا، اگر کورئیر کے ذریعے بھیجا جاتا ہے۔ ٹیلییکس یا فیکسمائل ٹرانسمیشن کے ذریعے بھیجے گئے کسی بھی مواصلات کی صورت میں اس طرح کے مواصلات کو اس تاریخ پر اثر انداز سمجھا جائے گا جب ٹیلیکس یا فیکسمائل ٹرانسمیشن کو حقیقت میں بھیجا گیا تھا۔ ان شرائط و ضوابط کے تحت کارڈ ہولڈر کو بھیجے گئے تمام نوٹسز کو سپلیمنٹری کارڈ ممبر کو بھیجا گیا مواصلات سمجھا جائے گا۔

.2 ان شرائط و ضوابط کے تحت کارڈ ہولڈر کی طرف سے بینک کو دی جانے والی کوئی بھی نوٹس یا ہدایات تحریری طور پر دی جائیں گی اور ذاتی طور پر پہنچائی جائیں گی یا رجسٹرڈ ڈاک یا کورئیر کے ذریعے بھیجی جائیں گی اور ایک کاروباری دن یا اتنی طویل مدت کے بعد لاگو ہوں گی جس کی بینک کو ضرورت ہو گی۔ بینک کی طرف سے اس طرح کے نوٹس کی اصل وصولی کے بعددی جائے گی۔

.1 کارڈ ہولڈر کسی بھی وقت بینک کو تحریری نوٹس دے کر کارڈ اور سروسز کا استعمال بند کر سکتا ہے جس کے ساتھ تمام کارڈز کو دو ترچھے حصوں میں کاٹا گیا ہے۔ کارڈ ہولڈر کٹ اپ کارڈز کے ساتھ بینک کی طرف سے تحریری نوٹس کی وصولی کی تاریخ تک لگائے گئے تمام چارجز کے لیے ذمہ دار ہو گا، اور بینک کی طرف سے باضابطہ طور پر تسلیم کیا گیا ہو گا

.2 بینک کسی بھی وقت بغیر کوئی وجہ بتائے اور کارڈ ہولڈر کو کوئی پیشگی اطلاع دیے بغیر کارڈز منسوخ کرنے کا حقدار ہوگا۔ کارڈز کی منسوخی پر، کارڈ ہولڈر تمام کارڈز کو بینک کو دو ترچھے حصوں میں کاٹ کر واپس کر دے گا۔ کارڈ ہولڈر کٹ اپ کارڈز کی وصولی کی تاریخ تک لگائے گئے تمام چارجز کے لیے ذمہ دار ہوں گے اور جن کا بینک کی طرف سے باقاعدہ اعتراف کیا گیا ہو گا

بینک کسی بھی وقت یا تو غیر مشروط طور پر یا بصورت دیگر ان شرائط و ضوابط میں سے کسی کو یا کارڈ ہولڈر کی کسی بھی ناقص یا خلاف ورزی کو چھوڑ سکتا ہے، بشرطیکہ اس طرح کی چھوٹ بینک کی طرف سے تحریری طور پر دی گئی ہو، سوائے مذکورہ بالا کے، کوئی معافی یا عذر نہ کیا جائے اور نہ ہی کوئی نظرانداز کیا جائے۔ یا بینک کی جانب سے ڈیفالٹ یا ان شرائط و ضوابط کی خلاف ورزی بینک کے حقوق اور اختیارات کی چھوٹ کے طور پر کام کرے گی اور بینک کی طرف سے کیے گئے یا نہ کیے جانے والے کسی بھی چیز سے چھوٹ کا اندازہ نہیں لگایا جائے گا جب تک کہ اس کا اظہار نہ کیا جائے۔ بینک کی طرف سے تحریری طور پر. کوئی بھی چھوٹ اگر تحریری طور پر دی جائے تو وہ صرف اس مخصوص میلر کی چھوٹ کے طور پر کام کرے گا جس سے اس کا تعلق ہے اور یہ ان شرائط و ضوابط میں سے کسی کی چھوٹ کے طور پر کام نہیں کرے گا۔

یہ شرائط و ضوابط اور کارڈ کا استعمال پاکستان کے بنیادی طریقہ کار کے قوانین کے تحت ہوگا، بشمول اسٹیٹ بینک آف پاکستان کے تمام اطلاعات، ہدایات، سرکلر اور ضوابط کے

کارڈ ہولڈر / سپلیمنٹری کارڈ ہولڈر ان شرائط و ضوابط سے پیدا ہونے والے کسی بھی تنازعہ کے سلسلے میں پاکستان میں مجاز عدالتوں کے خصوصی دائرہ اختیار میں جمع کرتا ہے، حالانکہ بینک کو یہ حق حاصل ہوگا کہ اگر مناسب سمجھے تو پاکستان سے باہر کی عدالتوں میں قانونی چارہ جوئی/ ریمیڈیزکی پیروی کرے۔ بینک کارڈ ہولڈر سے بینک کو واجب الادا رقم وصول کرے۔ کارڈ ان شرائط و ضوابط کے تحت چلتا ہے اور کارڈ ہولڈر یا سپلیمنٹری کارڈ ہولڈر کی طرف سے کارڈ کو برقرار رکھنا یا استعمال کرنا اس بات کو تسلیم کرنے کے مترادف ہوگا کہ کارڈ ہولڈر یا سپلیمنٹری کارڈ ہولڈر، جیسا کہ معاملہ ہو، ان شرائط و ضوابط کا پابند ہوگا۔ میں اعلان کرتا ہوں اور تصدیق کرتا ہوں کہ میں نے WMBL کے ساتھ اے ٹی ایم/ڈیبٹ کارڈ کے قیام اور آپریشن سے متعلق ATM/ڈیبٹ کارڈ کی سروسز کے لیے شرائط و ضوابط کو پڑھا، سمجھ لیا اور حاصل کر لیا ہے اور یہاں عہد کے ذریعے اور اس کی پابندی کرنے اور اس کی پابندی کرنے سے اتفاق کرتا ہوں کہ مذکورہ شرائط و ضوابط اور اس میں کوئی بھی تبدیلی، سپلیمنٹس یا ترمیم جو بینک وقتاً فوقتاً کر سکتا ہے۔

1۔.    طے شدہ شرائط۔
1.1 جب تک کہ سیاق و سباق کی ضرورت نہ ہو ، یہاں استعمال ہونے والی شرائط کے مندرجہ ذیل معنی ہوں گے: "اکاؤنٹ" کا مطلب کسی بھی روپی بینک اکاؤنٹ (اکاؤنٹ) سے ہوگا جو بینک کی شاخ کے ساتھ گاہک کے ذریعہ برقرار رکھا جاتا ہے۔.
"اکاؤنٹ اوپننگ فارم" کا مطلب بینک کے ذریعہ گاہک کو فراہم کردہ اکاؤنٹ کھولنے کا فارم ہوگا جس میں کسٹمر کو بینک کو مطلوبہ معلومات فراہم کرنا ہوگی اور دستخط کرنے کے بعد اسے بینک کو واپس کرنا ہوگا۔, بینک سے پہلے کسٹمر کو خدمات فراہم کرنے اور / یا خدمات فراہم کرنے کے لئے اکاؤنٹ کھولنا۔.
"اے ٹی ایم سروس" کا مطلب بینک کے ذریعہ پیش کردہ تمام مجاز بینکاری خدمات ہوں گی جو اے ٹی ایم کے ذریعہ گاہک کے ذریعہ حاصل کی جاسکتی ہیں۔.
"بینک" کا مطلب موبلنک مائیکرو فنانس بینک لمیٹڈ کی تمام یا کسی بھی شاخ سے ہوگا۔.
"بزنس ڈے" کا مطلب ایک دن ہوگا جب بینک کی متعلقہ برانچ بینکنگ کاروبار کرنے کے لئے کھلا ہو۔. "کسٹمر" کا مطلب کسی شخص ، فرم ، ادارہ ، کمپنی یا کوئی دوسرا ادارہ شامل ہوگا جو بینک کے ساتھ ایک یا زیادہ اکاؤنٹ (اکاؤنٹس) برقرار رکھتا ہے۔.
"روپیوں" کا مطلب اسلامی جمہوریہ پاکستان کی قانونی کرنسی ہوگی۔.
"ایس بی پی" کا مطلب "اسٹیٹ بینک آف پاکستان" ہوگا۔.
"خدمات" کا مطلب وہ خدمات ہوں گی جو بینک اپنی صوابدید پر وقتا فوقتا کسی اکاؤنٹ کے سلسلے میں پیش کرسکتا ہے۔.
"شرائط" کا مطلب بینک کے اکاؤنٹس اور خدمات کے لئے ان شرائط و ضوابط سے ہوگا ، جیسا کہ وقتا فوقتا ترمیم کی جاتی ہے۔.
"لین دین" کا مطلب کسی بھی لین دین سے ہوسکتا ہے جو اکاؤنٹ سے متعلق کسی صارف کے ذریعہ انجام دیا جاسکتا ہے اور / یا اس کے سلسلے میں فراہم کردہ خدمات۔.
2.    اکاؤنٹ کھولنا اور آپریشن کرنا۔
2.1 ایک صارف جو بینک کے ساتھ اکاؤنٹ کھولنے کے خواہاں ہے وہ اکاؤنٹ کھولنے کے لئے مکمل طور پر مکمل شدہ اکاؤنٹ کھولنے کا فارم پیش کرے گا۔. کسٹمر ایسی معلومات اور دستاویزات فراہم کرے گا ، جیسا کہ بینک کو وقتا فوقتا اکاؤنٹ کھولنے اور برقرار رکھنے کی ضرورت ہوسکتی ہے۔.
2.2 اگر کسی بھی وجہ سے بینک کو نامکمل دستاویزات اور / یا بینک کو فراہم کی جانے والی معلومات کی بنیاد پر بینک کے ساتھ اکاؤنٹ کھولا جاتا ہے تو ، بینک اپنی صوابدید میں اکاؤنٹ کو چلانے سے روک سکتا ہے۔. اس وقت تک جب گمشدہ دستاویزات اور / یا معلومات بینک کے اطمینان کے لئے فراہم کی گئیں۔. ان ضروریات کی تعمیل نہ کرنے کی صورت میں ، بینک کے پاس گاہک کو پیشگی اطلاع کے ساتھ ، اس طرح کے اکاؤنٹ کو بند کرنے کا اختیار ہوگا۔. اگر اکاؤنٹ سے متعلق معلومات یا دستاویزات کو بعد میں بینک نے جعلی یا غلط ہونے کے لئے دریافت کیا تو ، بینک اپنی صوابدید پر گاہک کا اکاؤنٹ بند کرسکتا ہے۔. ایسی صورت میں بینک اکاؤنٹ کی بندش کے نتیجے میں کسٹمر کو ہونے والے کسی بھی نقصان کی کسی بھی ذمہ داری سے انکار کرتا ہے۔.
2.3 بینک کو کسی بھی وجہ کی تفویض کیے بغیر اکاؤنٹ کھولنے سے انکار کرنے کا حق محفوظ ہے۔.
2.4 ہر اکاؤنٹ کو ایک مخصوص نمبر الاٹ کیا جائے گا ، جس کا اکاؤنٹ سے متعلق بینک کے ساتھ تمام خط و کتابت میں حوالہ دیا جانا ہے۔.
2.5 بینک کسی بھی وقت ، بغیر کسی ذمہ داری کے اور کسٹمر کو کوئی وجوہات بتائے بغیر ، کسی بھی ہدایت پر عمل کرنے سے انکار کرسکتا ہے جہاں بینک کو شبہ ہے کہ ایس بی پی کے کے وائی سی اور دیگر متعلقہ قواعد و ضوابط اور / یا ہدایات کے مطابق ، کسی بھی طرح کی دھوکہ دہی یا غیر قانونی کارروائی ملوث ہے۔.
2.6 بینک صارف کے اکاؤنٹ کی رازداری کو محفوظ رکھنے کے لئے ہر ممکن جدوجہد کرے گا۔ تاہم اس کے باوجود صارف یہ اعتراف کرتا ہے کہ بینک، منی لانڈرنگ کے خلاف قوانین و ضوابط اور بینک کی اندرونی پالیسیوں کے مطابق کام کرتا ہے۔ صارف اکاؤنٹ، لین دین اور خدمات کے حوالے سے بینک کی جانب سے عمل درآمد کے مقاصد کے لئے درخواست کردہ معلومات بینک کو فراہم کرنے پر اتفاق کرتا ہے اور بینک کو یہ اختیار تفویض کرتا ہے کہ وہ اس کے اکاؤنٹ، صارف، خدمات یا ان کے ساتھ منسلک لین دین کے بارے میں قانون کے تحت درکار کوئی بھی معلومات پاکستان میں اور / یا بیرون ملک کسی بھی تحقیقاتی / سرکاری ادارے اور / یا کسی بھی ایسے فرد کو فراہم کردے جن کے بارے میں بینک یہ محسوس کرتا ہے کہ انہیں موجودہ قوانین و ضوابط کے تحت ایسا کرنے کا اختیار حاصل ہے اور ایسا کوئی انکشاف کسی عدالتی حکم اور / یا علاوہ ازیں بینک اور / یا اس کے ملازمین کے مفادات کو تحفظ دینے کے لئے ضروری ہے یا اس کے مطابق ہے۔ بینک تھرڈ پارٹیوں کو بھی ایسی تفصیلات ظاہر/فراہم کر سکتا ہے جہاں کھاتےدار کے ان کے ساتھ لین دین/ لین دین پر کارروائی کرنے یا اکاؤنٹ ہولڈر کو اپنی مصنوعات یا خدمات پیش کرنے کے قابل بنانے کے لیے ایسا کرنا معقول حد تک ضروری ہو۔ اکاؤنٹ ہولڈر ان تمام نتائج کے خلاف معاوضہ ادا کرے گا اور بینک کو ہرجانہ ادا کرے گا جو اس طرح کے مذکورہ انکشاف کی وجہ سے پیدا ہوسکتے ہیں۔
3 مشترکہ اکاؤنٹ۔
1.1 اگر اکاؤنٹ دو یا زیادہ افراد کے ناموں پر کھولا جاتا ہے تو ، کسی بھی وقت اس کے کریڈٹ میں توازن مشترکہ طور پر صارفین کا ہوگا۔. ایسے افراد مشترکہ طور پر اور متعدد ذمہ داریوں کے لئے ذمہ دار ہوں گے جو اس سلسلے میں بینک کے ذریعہ فراہم کردہ اکاؤنٹ اور / یا خدمات کے سلسلے میں اٹھائے گئے ہیں۔.
3.2 بینک ادائیگی یا فراہمی کا مجاز ہے۔, یا زندہ بچ جانے والے کے حکم پر۔(s) ان افراد میں سے جن کے نام پر اکاؤنٹ کھولا گیا ہے یا ایسے زندہ بچ جانے والے کے قانونی ذاتی نمائندے۔, کوئی رقم, مشترکہ اکاؤنٹ کے کریڈٹ پر کھڑی سیکیورٹیز یا جائیدادیں یا تو زندہ بچ جانے والوں میں سے زیادہ کے لئے بینک کے پاس ہے۔.
 3.3 یہ کہ مشترکہ اکاؤنٹ کی صورت میں ، درج ذیل مزید دفعات کا اطلاق ہوگا:۔
کسی بھی یا تمام صارفین کی موت میں مداخلت ہوئی ہوگی یا نہیں۔, بینک وقتا فوقتا کسی بھی دستخطی اتھارٹی پر انحصار کرتے ہوئے کام جاری رکھ سکتا ہے جب تک کہ بینک کو تحریری طور پر یا ان میں سے کسی کی طرف سے نوٹس موصول نہ ہو کہ اسے قانون کے عمل سے ختم یا منسوخ کردیا گیا ہے۔ ورنہ. اس کے علاوہ ، کی صورت میں . کسی بھی صارفین کی موت ، سوال میں موت کے وقت اس طرح کے مشترکہ اکاؤنٹ کے کریڈٹ میں جمع ہونے والی رقم زندہ بچ جانے والوں کی ہوگی اور بینک اس طرح تصرف کرسکتا ہے۔.
4.4 اگر بینک کو مشترکہ اکاؤنٹ کے دستخط کنندگان سے متضاد ہدایات موصول ہوتی ہیں تو ، بینک اس طرح کی ہدایات پر عمل نہ کرنے کا حقدار ہوگا ، اس کی ضرورت ہوتی ہے کہ آئندہ کی تمام ہدایات پر دستخط تمام دستخط کنندگان کے ذریعہ مشترکہ طور پر ہوں۔. بینک بھی اس حق میں ہوگا کہ وہ کسٹمر کو اطلاع دیئے بغیر اکاؤنٹ کا عمل معطل کردے۔.
4.    پارٹنر شپ اکاؤنٹ
4.1 اگر شراکت داری فرم میں کوئی شراکت دار ہے۔ ("فرم"۔) جس کے لئے اکاؤنٹ کھولا گیا ہے۔, موت یا کسی اور طرح سے فرم کا ممبر بننا چھوڑ دیتا ہے۔, بینک مجاز ہے۔, جب تک کہ اسے تمام شراکت داروں یا شراکت داروں میں سے کسی یا فرم کے شراکت داروں میں سے کسی کے ٹرسٹی کے قانونی نمائندوں کی طرف سے تحریری طور پر نوٹس نہیں ملتا ہے۔, زندہ بچ جانے والے یا جاری ساتھی کے ساتھ سلوک کرنا۔(s) اس وقت کے طور پر فرم کے کاروبار کو چلانے اور اس کے اثاثوں سے آزادانہ طور پر نمٹنے کے لئے مکمل اختیارات رکھنے کی طرح گویا فرم میں کوئی تبدیلی یا تحلیل نہیں ہوا ہے۔.
5.    PLS بچت / PIS نوٹس / PLS ٹرم ڈپازٹ۔
5.1 بینک کی منافع اور نقصان کی شراکت کی اسکیم صرف بینک کے طور پر پاکستان میں بینک کے کاروبار کے منافع / نقصان تک محدود ہے اور صرف بینک ہی کسٹمر اکاؤنٹ کے کریڈٹ میں کھڑے فنڈز کے استعمال اور سرمایہ کاری کے بارے میں فیصلہ کرے گا۔.
5.2 کوئی استعمال۔, سرمایہ کاری۔, عزم, پی ایل ایس کی بچت میں جمع فنڈز کا فیصلہ یا مختص۔, اور پی ایل ایس نوٹس اور پی ایل ایس ٹرم ڈپازٹ اکاؤنٹس اس طرح اور اس طرح کی بنیاد پر اور ایسے اصولوں کے مطابق بنائے جائیں گے جیسے بینک کرسکتا ہے۔, اس کی مطلق صوابدید میں۔, وقتا فوقتا کا فیصلہ کریں۔.

6۔.    گاہک کی موت یا دوالا۔
6.1 کسی بھی فرد کسٹمر کے انتقال کا نوٹس موصول ہونے کی صورت میں۔, بینک کسٹمر کے کسی بھی اکاؤنٹ سے متعلق کسی بھی آپریشن یا واپسی کی اجازت دینے کا پابند نہیں ہوگا۔, سوائے مجاز دائرہ اختیار کی عدالت سے ایک درست جانشینی سرٹیفکیٹ کی تیاری۔, انتظامیہ یا پروبیٹ یا اس کے مساوی خط۔.
7۔.    اکاؤنٹس کا اختتام۔
7.1 بینک حق محفوظ رکھتا ہے۔, اس کی صوابدید پر۔ (اور کسٹمر کو پیشگی اطلاع کے ساتھ یا اس کے بغیر۔) اکاؤنٹ بند کرنے کے لئے, جو بینک کے لئے قابل اطمینان طریقے سے یا کسی اور وجہ سے نہیں چل رہا ہے۔, کسٹمر کو متعلقہ اکاؤنٹ بند کرنے کی وجہ ظاہر کیے بغیر۔. بینک کو کسی بھی دوسرے قسم کے تعلقات (زبانیں) ختم کرنے کا حق بھی محفوظ ہے۔
7.2 اکاؤنٹ کی بندش پر ، اکاؤنٹ سے متعلق کسی بھی غیر استعمال شدہ چیک کو فوری طور پر گاہک کے ذریعہ بینک کو واپس کرنا ہوگا۔. متبادل کے طور پر ، اس بات کی تصدیق بینک کے اطمینان سے تحریری طور پر کی جانی چاہئے کہ غیر استعمال شدہ چیک اور / یا کارڈ تباہ کردیئے گئے ہیں۔.
7.3 بینک کسی بھی اکاؤنٹ کو بند کرنے کا حق محفوظ رکھتا ہے ، بشمول کسی ایسے اکاؤنٹ تک محدود نہیں جو مطلوبہ کم سے کم توازن برقرار رکھنے میں ناکام ہوجاتا ہے ، بغیر کسی بندش کی کوئی وجہ بتائے۔.
7.4 بینک اپنے آخری وقت پر کسٹمر کو میل کرکے بند اکاؤنٹ کے حوالے سے اپنی ذمہ داری نبھا دے گا۔, ایسے اکاؤنٹ کی کرنسی میں بینک ڈرافٹ / تنخواہ آرڈر کے بارے میں معلوم پتہ۔, اس طرح کے اکاؤنٹ میں اس وقت کے کریڈٹ بیلنس کی رقم میں کسٹمر کے آرڈر کو قابل ادائیگی۔(s) کسی بھی دعوے کے اکاؤنٹ کے سلسلے میں جو بینک کے پاس ایسے فنڈز پر ہوسکتا ہے جو کریڈٹ بیلنس تشکیل دیتے ہیں۔.
8۔.    اکاؤنٹس سے واپسی۔
8.1 چیک اور دیگر ادائیگی کی ہدایات پر کسٹمر کی جانب سے بینک کو فراہم کردہ نمونہ دستخط (زبانیں) کے مطابق دستخط کرنے ہیں اور اس میں ردوبدل گاہک کے ذریعہ تصدیق شدہ ہونا ہے۔.
8.2 ناخواندہ صارفین چیک پر کٹنگ اور ردوبدل کے لئے ذمہ دار نہیں ہوں گے ، جب تک کہ صارف کے ذریعہ اس کی تصدیق نہ کی جائے۔.
8.3 بینک چیک پر ادائیگی روکنے کے لئے کسٹمر سے ہدایات ریکارڈ کرے گا۔. بینک ان ہدایات کی کوئی ذمہ داری قبول نہیں کرے گا جن پر مناسب طریقے سے عمل نہیں کیا گیا ، عمل درآمد یا تاخیر نہیں کی گئی ہے اور ادائیگی فائدہ اٹھانے والے کو نیک نیتی سے کی گئی ہے۔. بینک ان ہدایات کی کوئی ذمہ داری قبول نہیں کرے گا جو بینک کی رائے میں غلط مواصلات کی گئیں۔.
8.4 بینک وقتا فوقتا اکاؤنٹس پر اپنی صوابدید پر ہفتہ وار (یا دیگر متواتر) واپسی کی پابندیاں عائد کرسکتا ہے۔.
8.5 کسٹمر صرف متعلقہ برانچ سے ادائیگی وصول کرنے کا حقدار ہوگا۔, بینک جہاں اکاؤنٹ برقرار ہے۔, جب تک کہ بینک کے ذریعہ کچھ مخصوص لین دین / انخلاء کو واضح طور پر اجازت نہیں دی جاتی ہے کہ وہ بینک کی پاکستان میں دوسری شاخوں کے ذریعہ فائدہ اٹھائے اور خدمات سے متعلق ایسی شرائط کے تابع ہو جیسے بینک وقتا فوقتا متعین کرسکتا ہے۔.
8.6 پختگی سے پہلے کسی مدت کے ذخائر کی واپسی بینک کی صوابدید پر ہوگی اور اس طرح کی مدت جمع کروانے کی مدت کے لئے قابل اطلاق منافع یا سود کی شرح واپسی سے قبل برقرار رکھی جانے والی مدت کی رقم کے سلسلے میں ہوگی۔. کسی بھی انخلا پر وقتا فوقتا بینک کی پالیسی کے مطابق قبل از وقت انکشیشن / واپسی سے وابستہ جرمانے اور اخراجات بھی ہوں گے اور جمع ہونے کے وقت گاہک کو مطلع کیا جائے گا۔.
9۔.    تفصیلات کی تبدیلی
9.1 اکاؤنٹ کی تفصیلات میں کسی قسم کی تبدیلی کی صورت میں گاہک فوری طور پر بینک کو مطلع کرے گا۔. جب تک کہ اس طرح کی تفصیلات کو بینک کو تحریری طور پر مطلع نہیں کیا جاتا ہے اور بینک کے ذریعہ اس کا اعتراف نہیں کیا جاتا ہے ، بینک کسٹمر کی موجودہ ہدایات پر انحصار کرنے کا حقدار ہوگا۔.
10۔.    چیک کتابیں
10.1 کسی بھی اکاؤنٹ سے واپسی صرف گاہک کی ایکسپریس تحریری درخواست پر ، بینک کے ذریعہ فراہم کردہ چیک فارموں پر کی جائے گی۔.
10.2 بینک صرف متعلقہ کسٹمر یا ایسے دوسرے شخص کو چیک بک جاری کرے گا ، جیسا کہ گاہک کے ذریعہ تحریری طور پر مستند ہے۔.
10.3 کسٹمر بینک کے ذریعہ جاری کردہ کسی بھی چیک کتابیں اور دیگر مالیاتی آلات کو ہر وقت محفوظ اور محفوظ طریقے سے رکھنے کا بیڑا اٹھاتا ہے۔. کسٹمر مناسب دیکھ بھال اور تدبر کا استعمال کرے گا تاکہ یہ یقینی بنایا جاسکے کہ بینک کے ذریعہ جاری کردہ تمام چیک ، چیک کتابیں اور مانیٹری آلات چوری ، ناجائز استعمال یا کسی غیر مجاز مقصد کے لئے استعمال نہیں ہوئے ہیں۔. بینک کسی بھی نقصان یا ذمہ داری کے لئے ذمہ دار نہیں ہوگا جو مناسب دیکھ بھال کرنے میں کسٹمر کی ناکامی کے سلسلے میں ہوسکتا ہے۔. ایسی صورت میں جب چیک کسی بھی گاہک سے چوری یا گم ہو یا جعلی ہو ، گاہک فوری طور پر بینک کو مطلع کرے اور بینک کو ادائیگی کی روک تھام کی ہدایات جاری کرے۔. کسی بھی چیک کتابوں کے ضائع ہونے کو بھی فوری طور پر گاہک کے ذریعہ بینک کو مطلع کیا جانا چاہئے۔. اگر کسٹمر نے متعلقہ چیک پیش کرنے سے پہلے چوری یا نقصان کی اطلاع دی ہے تو ، اسے متعلقہ چیک کی ادائیگی کے نتیجے میں ہونے والے کسی نقصان یا نقصان کا ذمہ دار نہیں ٹھہرایا جائے گا۔.
10.4 چیک کتابیں کسٹمر یا اس کے مجاز نمائندے کو فراہم کی جائیں گی۔. اگر چیک بک ، کسٹمر (ان) یا اس کے / ان کے مجاز نمائندے (زبانیں) کے ذریعہ پرنٹنگ کی تاریخ سے 60 دن تک جمع نہیں کی جاتی ہے تو ، بینک کو چیک بک کو ختم کرنے کا حق حاصل ہوگا۔. اس کی توقع میں چیک بک چارجز / کسی بھی سرکاری ٹیکس کی وصولی واپس نہیں کی جائے گی۔. اگر بینک جے ایس کے ساتھ جمع کرنے کے لئے کوئی چیک تاخیر یا گمشدہ ہو گیا ہے تو ، بینک اس معاملے کو تیزی سے حل کرنے کے لئے اپنی پوری کوششوں کا استعمال کرے گا۔.
10.5 اکاؤنٹ کی واپسی صرف بینک کے ذریعہ فراہم کردہ چیک کی پیش کش پر کی جاسکتی ہے ، نمونہ کے دستخطوں اور بینک کے ساتھ رجسٹرڈ حکام پر دستخط کرنے کے مطابق دستخط کیے جاتے ہیں۔.
10.6 بینک کو یہ حق حاصل ہے کہ وہ چیک بک (زبانیں) کی فراہمی سے انکار کرے یا بغیر کسی پیشگی اطلاع کے اور بغیر کسی وجہ بتائے چیک بک کی سہولت واپس لے لے ، اگر اس کی رائے میں ، اکاؤنٹ اطمینان بخش طور پر چل رہا ہے یا کسی اور وجہ سے۔.

11۔.    جمع
11.1 بینک کسٹمر کو مکمل طور پر کسٹمر کے اپنے خطرے پر جمع کرنے کے لئے قابل ادائیگی چیک ، ڈرافٹ اور دیگر آلات قبول کرسکتا ہے۔. اگرچہ کریڈٹ شدہ اشیاء کے خلاف کارروائی نہیں کی جاسکتی ہے ، اور اگر اسی کے خلاف کھینچنے کی اجازت دی جاتی ہے تو ، اگر آلات کی آمدنی کا احساس نہیں ہوتا ہے تو بینک کو اکاؤنٹ میں ڈیبٹ کرنے کا حق حاصل ہوگا۔.
11.2 کسٹمر بینک کو مکمل طور پر معاوضہ دے گا کیونکہ بینکر کو جمع کرنے سے کوئی نقصان ہوسکتا ہے جس کی وجہ سے بینک کی توثیق یا چیک ، بل ، نوٹ ، ڈرافٹ ، ڈیویڈنڈ وارنٹ یا کسی دوسرے آلات پر جمع ہونے کے لئے پیش کردہ کسی دوسرے آلات پر خارج ہونے کی ضمانت دی جاسکتی ہے۔ .
11.3 کسٹمر کے ذریعہ جمع کردہ چیک یا دیگر بات چیت کرنے والے آلات جن کی بے عزتی کی گئی ہے وہ خصوصی پوسٹ یا میسینجر tcith-e-Cut-torner کے ذریعہ گاہک کے آخری معلوم پتے پر واپس آسکتے ہیں جس سے متعلقہ کسٹمر کے خطرے اور اخراجات کا خطرہ ہوتا ہے۔, جب تک کہ اس کے جمع کرنے کے لئے پہلے سے انتظام نہ کیا گیا ہو۔.
11.4 بینک چیک ، ڈرافٹ اور دیگر آلات کو قبول کرسکتا ہے جو کسٹمر کے اپنے خطرے میں مکمل طور پر جمع کرنے کے لئے کسٹمر کو قابل ادائیگی یا توثیق شدہ ہے۔.
11.5 چیکوں کی آمدنی کے ساتھ قائم کردہ ذخائر کلیئرنس کے بعد قابل قدر ہوں گے۔. بینک کے پاس جمع ہونے والے تمام چیکوں کو مکمل طور پر اس کی صلاحیت میں بینک کے ذریعہ وصول کیا جانا چاہئے کیونکہ کسٹمر کے جمع کرنے والے ایجنٹ اور بینک جمع کرنے کے لئے اکاؤنٹ میں جمع کی گئی اشیاء کی وصولی کی کوئی ذمہ داری قبول نہیں کرتا ہے۔.
11.6 بینک تیسرے فریق کے حکم کی طرف راغب چیک چیک کرنے کے لئے قبول کرنے سے انکار کرسکتا ہے۔. اس کے بعد کی توثیق کی تصدیق کے لئے کسٹمر کو بینک کے ساتھ انتظامات کرنا ہوں گے۔. اکاؤنٹ میں جمع کردہ تمام چیک ، آرڈرز ، بل ، نوٹ ، گفت و شنید کے آلات اور رسیدیں اور دیگر دستاویزات پر ظاہر ہونے والی تمام توثیق کی صداقت ، درستگی اور جواز کی پوری ذمہ داری گاہک قبول کرتی ہے۔.
11.7 اکاؤنٹ کھولنے اور برقرار رکھنے کے لئے کم سے کم ابتدائی جمع / کم سے کم اوسط اکاؤنٹ بیلنس کا تعین بینک کے ذریعہ وقتا فوقتا کیا جاسکتا ہے۔. گاہک ہر وقت اس طرح کے کم سے کم توازن کو برقرار رکھنے پر متفق ہے۔.
11.8 بینک کسی بھی اکاؤنٹ کو بند کرنے کا حق محفوظ رکھتا ہے ، بشمول کسی ایسے اکاؤنٹ تک محدود نہیں جو مطلوبہ کم سے کم توازن برقرار رکھنے میں ناکام ہوجاتا ہے ، بغیر کسی بندش کی کوئی وجہ بتائے۔.
11.9 بینک اس طرح کے ذخیرہ (ies) کے ساتھ اپنے کنٹرول میں فنڈز جمع کرسکتا ہے کیونکہ وہ وقتا فوقتا اپنی صوابدید میں منتخب کرسکتا ہے۔.
11.10 سوائے اس کے کہ جہاں گاہک اور بینک کے مابین اس کے برعکس اتفاق ہو۔, اکاؤنٹ میں کریڈٹ کے لئے موصول ہونے والی ہر ادائیگی۔(s) اس طرح کے اکاؤنٹ کے علاوہ کسی دوسری کرنسی میں۔(s) بینک اپنی صوابدید پر کرنسی میں تبدیل ہوسکتا ہے۔(ies) ایسے اکاؤنٹ کا(s) اس طرح کے اکاؤنٹ میں جمع ہونے سے پہلے بینک کے اس وقت کے موجودہ شرح تبادلہ پر۔(s).
11.11 اس صورت میں جب آلے کی آمدنی (یعنی). چیک ، ڈرافٹ ، وغیرہ۔. جمع کرنے کے لئے جمع اکاؤنٹ میں جمع کیا جاتا ہے اور اس کے نتیجے میں کسی بھی وجہ سے بلا معاوضہ رہتا ہے یا مستقبل میں کسی بھی وقت بلا معاوضہ واپس کردیا جاتا ہے حالانکہ پہلے بطور ادائیگی مشورہ دیا جاتا تھا۔, گاہک آلے کی رقم کی واپسی / ادائیگی کا وعدہ کرتا ہے۔(s) بینک کے ذریعہ ہونے والے کسی بھی اخراجات کے ساتھ۔. کسٹمر بینک کو اپنے اکاؤنٹ (اکاؤنٹس) سے اس طرح کی رقم اور اخراجات ڈیبٹ کرنے کا اختیار دیتا ہے۔.
11.12 کسٹمر کسی بھی نقصان کے لئے بینک کو جمع کرنے والے بینکر کی حیثیت سے معاوضہ ادا کرے گا جو بینک کسی بھی چیک پر کسی بھی توثیق اور / یا خارج ہونے والے مادہ کی ضمانت کی وجہ سے اٹھا سکتا ہے۔, بل, نوٹ, ڈرافٹ, ڈیویڈنڈ وارنٹ یا کوئی دوسرا آلہ جو گاہک کے ذریعہ جمع کرنے کے لئے جمع کیا جاتا ہے اور بینک کی طرف سے دی جانے والی ہر گارنٹی کو ہر معاملے میں کسٹمر کی ایکسپریس درخواست پر دیا گیا سمجھا جائے گا۔. گاہک اس طرح کے تمام آلات پر ظاہر ہونے والی تمام توثیق کی صداقت ، درستگی اور جواز کی ذمہ داری قبول کرتا ہے۔.
11.13 بینک کی صوابدید پر ادا شدہ چیک پانچ (5) سال کی مدت ختم ہونے کے بعد بینک کے ذریعہ تباہ کردیئے جاسکتے ہیں۔. صرف اسی کی تصاویر ہی دستیاب ہوسکتی ہیں جیسا کہ بینک کے ساتھ الیکٹرانک میڈیا یا دیگر جدید آلات پر محفوظ ہے۔.
12۔. چارجز۔
12.1 چارجز بینک کے چارجز کے شیڈول کے مطابق عائد کیے جائیں گے۔. غیر ملکی کرنسی اکاؤنٹس پر لین دین کے لئے معاوضے صرف غیر ملکی کرنسی میں وصول کیے جائیں گے۔.
12.2 بینک کو کسی بھی اخراجات ، فیسوں ، کمیشن ، سود ، زکوٰ ، ٹیکس ، اسٹیمپ ڈیوٹی ، ایکسائز ڈیوٹی وغیرہ کے لئے اکاؤنٹ میں ڈیبٹ کرنے کے لئے کسٹمر سے کسی پیشگی اجازت کی ضرورت نہیں ہوگی۔. بینک کے ساتھ کسی بھی طرح کے معاملات یا حکومت پاکستان کو قابل ادائیگی سے پیدا ہوا۔
12.3 زکوٰ ، جہاں بھی قابل اطلاق ہے ، مخصوص زکوٰ year سال کے لئے اعلان کردہ ، مستثنیٰ حد سے زیادہ بیلنس رکھنے والے اکاؤنٹس سے قیمت کی تاریخ میں کٹوتی کی جائے گی۔. زکوٰ سے استثنیٰ کی صورت میں ، زکوٰ from سے مستثنیٰ فارمیٹ پر استثنیٰ کا اعلان بینک کے پاس تشخیص کی تاریخ سے کم از کم ایک (1) ماہ قبل یا اس وقت قابل اطلاق زکوٰ قواعد کے مطابق جمع کیا جائے گا۔.
12.4 ہر وقت گاہک کی ضرورت ہوتی ہے کہ وہ وقتا فوقتا بینک کے ذریعہ طے شدہ پی ایل ایس یا موجودہ اکاؤنٹ میں کم سے کم توازن برقرار رکھے۔. اگر ، کسی بھی وقت ، اکاؤنٹ میں کریڈٹ بیلنس کم سے کم ضرورت سے کم ہوتا ہے تو ، گاہک وقتا فوقتا بینک کے ذریعہ مقرر کردہ اور چارجز کے شیڈول میں بیان کردہ جرمانے کی ادائیگی کا ذمہ دار ہوگا۔. بینک اس جرمانے کے سلسلے میں اکاؤنٹ کو ڈیبٹ کرنے کا حقدار ہوگا (اگر کسٹمر اکاؤنٹ میں صفر بیلنس فورا چھ (6) ماہ کی مدت دکھائی جاتی ہے اور غیر فعال ہے تو ، بینک اکاؤنٹ بند کرنے کا حقدار ہوگا)۔.
13۔.    اکاؤنٹس پر واپسی (بچت ، مدت)
13.1 منافع اور نقصان میں حصہ لینے والے اکاؤنٹ کی صورت میں ، اکاؤنٹ میں رقم اور اس پر منافع ان شرائط کے تابع ہوگا۔.
13.2 منافع اور نقصان کی شراکت کی اسکیم کے تحت کسی بھی واپسی کا حساب کتاب کرنے کا طریقہ وقتا فوقتا جاری کردہ ایس بی پی کے مروجہ قواعد و ضوابط / ہدایات کے ذریعہ چلتا ہے۔.
13.3 بینک کے ذریعہ منافع / نقصان کے طور پر مختص کی جانے والی کوئی بھی رقم حتمی اور تمام صارفین پر پابند ہوگی۔. کوئی بھی گاہک یا کوئی دوسرا فرد جو اس کے تحت دعویٰ کرتا ہے وہ اس طرح کے منافع / نقصان کے عزم کی بنیاد پر سوال کرنے کا حقدار نہیں ہوگا۔.
13.4 جب تک کہ دوسری صورت میں اس کی وضاحت نہیں کی جاتی ہے ، پختگی کی تاریخ پر بینک کے قابل اطلاق مروجہ شرح پر خود بخود اصطلاح جمع ہوجائے گی۔. پختگی سے پہلے جمع کروانے کی واپسی بینک کی صوابدید پر ہوگی ، اور اس کے نتیجے میں اصل یا کسی تجدید شدہ پختگی کی تاریخ کے بعد سے حاصل کردہ کسی بھی یا تمام سود یا منافع کو ضبط کیا جائے گا۔. قبل از وقت تصادم کی صورت میں بینک کو غیر متوقع مدت کے لئے کسی بھی جرمانے اور / یا دیگر وابستہ اخراجات کا اطلاق کرنے کا بھی حق محفوظ ہے۔.
13.5 اگر کاروباری دن کے علاوہ کسی دن میں ٹائم ڈپازٹ پختہ ہوجاتا ہے تو ، بینک اگلے کاروباری دن جب بینک کاروبار کے لئے کھلا ہوتا ہے تو ، بینک اس رقم کو جمع اور / یا اس پر واپسی کی ادائیگی کرے گا۔ .
13.6 وقت کے ذخائر کی ابتدائی گنجائش واپسی کی کم شرح اور دیگر معاوضوں ، قبل از وقت انکشیمنٹ جرمانہ اور اس سے وابستہ اخراجات کے ساتھ مشروط ہوگی جو وقتا فوقتا بینک کے ذریعہ گاہک کو متعین اور مطلع کیا جاتا ہے۔.
14۔.    اکاؤنٹ کا بیان۔
14.1 بینک کسٹمر کو اکاؤنٹ کا بیان جاری کرے گا اور بھیجے گا جیسا کہ ضرورت ہو۔. کسٹمر اکاؤنٹ کے متعلقہ بیان جاری کرنے کی تاریخ کے پینتالیس (45) دن کے اندر بینک کو کسی غلطی ، تضاد اور / یا غلطی سے آگاہ کرے گا ، جس کے بعد بینک کے بیان کو حتمی سمجھا جائے گا۔.
14.2 اگر کسٹمر مذکورہ بالا بینک کو مطلع کرنے میں ناکام رہتا ہے تو ، پھر اکاؤنٹ کے اس طرح کے بیان کو درست سمجھا جائے گا اور اس میں بیان کردہ توازن کو گاہک کے ذریعہ تصدیق شدہ سمجھا جائے گا اور اسے تمام مقاصد کے لئے حتمی ثبوت کے طور پر لیا جائے گا۔.
14.3 اندراجات میں کسی قسم کی غلطی کی صورت میں ، بینک اس غلطی کو دور کرنے کے اپنے حقوق میں ہوگا اور اس کے بعد گاہک کو اس طرح کی غلطی سے مطلع کرے گا اور کسی بھی رقم سے غلط طور پر ادا کی جانے والی یا جمع شدہ رقم کی وصولی / فراہمی کرے گا۔ واپسی) اس پر۔. اس طرح کی غلطیوں اور اس کے نتیجے میں ہونے والے الٹ پلٹ کی وجہ سے ہونے والے کسی نقصان یا نقصان کا بینک ذمہ دار نہیں ہوگا۔.
14.4 بینک کسٹمر کو باقاعدہ وقفوں پر بیلنس کا بیان بینک آف پاکستان کے قواعد و ضوابط کے مطابق بینک کے ذریعہ مقرر کرے گا۔. توازن کا یہ بیان بینک کے ذریعہ بیان کردہ تاریخ کے مطابق اکاؤنٹ میں برقرار کسٹمر کے توازن کی تصدیق کے ل the بینک کی مدد کرے گا۔. کسٹمر ان تمام ہدایات پر عمل کرنے پر اتفاق کرتا ہے جو بینک اس سلسلے میں جاری کرسکتا ہے۔, پینتالیس کے اندر کسی بھی قسم کی تضادات سے بینک کو آگاہ کرنے کی ذمہ داری بھی شامل ہے۔ (45۔) اکاؤنٹ کے بیان کے اجراء کے دن۔, اس میں ناکام ہونا جس میں توازن کا بیان تمام مقاصد کے لئے درست سمجھا جائے گا۔. کیلنڈر سال میں کم از کم دو بار اکاؤنٹس کا بیان بلا معاوضہ بھیجا جائے گا۔. بینک اسٹیٹ بینک آف پاکستان کے قواعد و ضوابط اور بینک کے معاوضوں کے نظام الاوقات کے مطابق اکاؤنٹ کی نقل اور / یا اضافی بیانات کے لئے کسٹمر سے چارج کرسکتا ہے۔.
14.5 ان اکاؤنٹس کی صورت میں جن کے اکاؤنٹس کے بیانات غیر اعلانیہ طور پر واپس کردیئے جاتے ہیں ، اس طرح کے اکاؤنٹس کو بینک کے ذریعہ 'وہاباؤٹس نامعلوم' کے طور پر درجہ بندی کیا جاسکتا ہے۔. بینک قابل اطلاق قوانین اور ایس بی پی کی ہدایت کے مطابق ایسے اکاؤنٹس سے نمٹائے گا۔.

15۔. شناخت کی تصدیق۔
15.1 بینک ایسے افراد کو فوٹو اکاؤنٹ کی سہولت پیش کرے گا جو ایسے اکاؤنٹس کی بحالی اور کارروائی کے لئے بینک کے معیار کو پورا کرتے ہیں۔. اس میں ان افراد تک شامل ہوں گے لیکن ان تک محدود نہیں ہوں گے جو ضعف ، ناخواندہ اور / یا بصورت دیگر فوٹو گرافی کی شناخت کی ضرورت ہوتی ہے تاکہ بینک کو ایسے افراد کی مناسب شناخت کرنے اور بینک کے کے سی سی کی ضروریات کو پورا کرنے کے قابل بنائے۔. ایسے افراد کو اپنے اکاؤنٹ کو چلانے کے قابل بنانے کے لئے بینک کو معاوضہ فراہم کرنے کی بھی ضرورت ہوسکتی ہے۔. وقتا فوقتا لاگو ہونے والے قوانین ، ضوابط اور ایس بی پی ہدایت کے تحت فوٹو اکاؤنٹ ہولڈرز کو کارڈ جاری کیے جاسکتے ہیں۔. فوٹو اکاؤنٹس رکھنے والے افراد کو بینک میں ذاتی طور پر ایسے اکاؤنٹس چلانے کی ضرورت ہوگی ، بشمول کسی بھی آلات اور / یا دستاویزات پر دستخط کرنا جو بینک کے افسر کے سامنے کیے جائیں گے۔.
16۔.     بینک کے نوٹس۔
16.1 بینک کی جانب سے تمام خطو کتابت، نوٹسز یا مطالبات، سروس کو موثر کرنے کے کسی بھی دیگر موڈ سے تعصب برتے بغیر کئے جائیں گے، اور اگر صارف کو ذاتی طور پر پیش کئے جائیں یا دئیے جائیں یا ٹیلکس یا فیکس یا رجسٹرڈ ڈاک یا ایس ایم ایس یا ای میل یا کورئیریا مستقبل میں استعمال ہونے والےکوئ بھی الیکٹرانک ذرائعے¬ کے ذریعے بھجوایا جائے گا تو بھجوانے کی تاریخ سے تین دن کے اندراندر ترسیل کردہ اور وصول کردہ تصور کیا جائے گا۔ بشرطیکہ بینک متابدل کے طور پر یا مندرجہ بالا کے علاوہ، جیساکہ اجازت دی گئی ہے، انگریزی اور/یا اردو زبان کے اخبارات میں نوٹسز چھپواتے ہوئے انہیں نوٹس دے۔
17۔.     معاوضہ اور ذمہ داری۔
17.1 بینک اپنے صارفین کو اکاؤنٹ اور خدمات کی غلطی سے پاک آپریشن فراہم کرنے کے لئے اپنی بہترین کوششوں کا استعمال کرے گا۔. اس کے باوجود, کسٹمر اس کے ذریعہ اس بات کی تصدیق کرتا ہے کہ بینک بینک اور اس کے متعلقہ افسران کو بے ضرر رکھنے کے لئے معاوضہ اور معاوضہ نہیں دے گا۔, ڈائریکٹرز, ملازمین اور نمائندے۔, ایجنٹوں اور ٹھیکیداروں سے اور کسی بھی اور تمام نقصانات کے خلاف۔, نقصانات, واجبات, ادائیگی اور ذمہ داریوں اور تمام اخراجات۔ (بغیر کسی حد کے معقول باقاعدہ لاگت۔) خرچ, برداشت کیا۔, برقرار یا ادا کرنے کی ضرورت ہے۔, براہ راست کے ذریعہ, یا بینک پر مسلط کرنے کی کوشش کی۔, پیدا ہونے والی بات:
(i) بینک کسٹمر کی تحریری یا زبانی ہدایات پر عمل کر رہا ہے جو ادائیگی روکنے ، میل ہولڈ کرنے ، جاری کرنے یا کسی بھی دوسری ہدایات پر عمل کرنے کے لیے ، بشمول کسٹمرکی جانب سے بینک کو وقتا فوقتا جاری کردہ ہدایات ، یا کارڈ کا غیر مجاز استعمال
(ii) سروسزیا سروسز سے متعلق کسی بھی دوسرے معاملے کے ذریعہ درخواست کی گئی کسی بھی قسم کی رقم ، منتقلی ، ترسیل یا عدم فراہمی سے متعلق کسٹمر یا کسی دوسرے تیسرے فریق کا کوئی دعوی
(iii) فریق سوم کے خدمت فراہم کنندگان پر منحصر کسی بھی ٹرانزیکشن میں کسی قسم کے تضادات ، غلطیوں یا تاخیر کے لئے کسٹمر کا کوئی دعوی
(iv) ا بینک پر نحصار کرتے ہوئے بینک کی طرف سے کی جانے والی کوئی بھی کارروائی: ہدایات جو نقل یا غلط ہونے کا انکشاف کرتی ہیں:
ہدایات جو کسٹمرکے ذریعہ دی گئیں ، جو بعد میں دھوکہ دہی کے طور پر ثابت ہوئیں
سروس کے ذریعے یا اس کے مطابق کی جانے والی ادائیگیوں پر بینک کی طرف سے ادا کیا جانے والا کوئی ٹیکس یا دیگر محصولات۔
(v) کوئی غلطی ، غفلت یا ڈیفالٹ ، عمل یا کوتاہی چاہے وہ خود یا اس کے ملازمین کی ہو یا کسی نمائندے ، ذیلی ایجنٹ ، شریک بینک یا ان کے ملازمین کی۔ ان شرائط کے تابع ، ہدایات میں کوئی ترمیم یا تغیر۔
(vi) بینک کے کنٹرول سے باہر کی وجوہات کی بنا پر کسی بھی ہدایات پر عمل نہیں کیا گیا۔
(vii) کوئی بھی بالواسطہ ، حادثاتی یا نتیجہ خیز نقصان یا نفع کا نقصان جو کہ کسٹمر کسی بھی مواصلات یا الیکٹرانک ٹرانسمیشن سہولت یا خدمات میں خلل یا ناکامی کی وجہ سے برداشت کر سکتا ہے۔
(viii) کسٹمر کے ذریعہ کسی بھی سروس کا کوئی استعمال یا عمل۔
(ix) ااسٹیٹ بینک یا کسی دوسرے ریگولیٹری باڈی/اداروں کی جانب سے عائد کردہ پابندیوں کی وجہ سے فنڈز کی عدم دستیابی ، بشمول واپسی کے لیے درخواست (ے) کو پورا کرنے کے لیے غیر ضروری زر مبادلہ فروخت کرنے سے انکار یا نااہلی ، واپسی پر پابندی یا تبادلوں پر ، یا منتقلی پر لازمی منتقلی یا پابندی عائد ہونے کی صورت میں یا دوسری صورت میں اکاؤنٹنگ کو کسی بھی طرح متاثر کرنا۔ کن حالات میں ، بینک کا ہیڈ آفس ، دیگر برانچز ، ماتحت ادارے یا اس سے وابستہ افراد پاکستان کے کسی بھی بینک کی برانچ کے ساتھ کسٹمر کے ایسے اکاؤنٹ کے کریڈٹ کی رقم ادا کرنے کے پابند نہیں ہوں گے۔
اگر بینک کو کسی نوٹس کی پیشکش کی گئی ہو یا کسی بھی کاروائی ، کاروائی یا مقدمہ بازی میں فریق بنایا گیا ہو ، جس میں کسٹمر ، اکاؤنٹ ، سروسز اور/یا کسی تیسرے فریق کی مثال پر لین دین شامل ہو۔ اور بینک براہ راست تنازعہ میں ہے) بینک تمام اخراجات اور اخراجات کے لیے بینک کو مکمل طور پر معاوضہ دے گا ، بشمول بینک کی جانب سے کیے گئے اخراجات اور نقصانات اور بینک متعلقہ کسٹمر کے کسی بھی اکاؤنٹ میں ایسی رقم ڈبیٹ کر سکتا ہے۔
18۔. ترمیم۔
بینک وقتاً فوقتاً ان شرائط پر نظر ثانی کر سکتا ہے یا ان میں سے کسی کو تبدیل کر سکتا ہے۔ ایسی کسی تبدیلیوں سے، ترامیم کو موثر ہونے سے تیس (30) دن قبل کسٹمر کو مطلع کر دیا جائے گا۔ ایسی تبدیلیوں سے کسٹمر کو چاہے ڈاک ایس ایم ایس یا ای میل یا اخبار میں نوٹس یا بینک کے متعلقہ برانچ کی حدود کے اندر کسی نمایاں جگہ پر چسپاں کرتے ہوئے مطلع کرے گا۔ اگر کسٹمر ان تبدیلیوں پر تحریری طور پر کوئی اعتراض نہیں کرتا تو انہیں منظور کردہ تصور کیا جائے گا۔ کسٹمرکے اعتراضات بینک کو لازمی طور پر ترامیم کی اطلاع کی تاریخ سے ایک ماہ کے اندر اندر وصول ہوجانے چاہئیں اور اگر بینک اورکسٹمر اس مسئلے کو مناسب وقت کے اندر اندر حل کرنے میں ناکام رہے ہیں، توکسٹمر یا بینک، بینکنگ کا رشتہ ختم کرنے کے لئے آزاد ہوں گے۔
بینک وقتا فوقتا چارجز کے شیڈول کے مطابق ، سروسز کے سلسلے میں ذمہ دار کسی بھی معاوضے میں ترمیم اور ، یا تبدیلیاں کرسکتا ہے۔. اس طرح کی تبدیلیاں بینک کی طرف سے اس طرح کی ترمیم کے لئے بتائی گئی تاریخ سے موثر ہوں گی۔اس طرح کی تبدیلیوں کو یا تو کسی کسٹمر کو میل کے بارے میں یا اخبار میں نوٹس کے ذریعہ یا برانچ میں نوٹس لگا کر مطلع کیا جائے گا۔ (7۔) بینک کی متعلقہ برانچ کے احاطے میں یا اس طرح کے طریقہ کار میں جو وقتا فوقتا ایس بی پی کے ذریعہ تجویز کیا جاسکتا ہے ، کے اندر کسی واضح جگہ پر لگایا جائے گا
19. سٹاپ پیمنٹ انسٹرکشن
بینک صرف کسٹمر کے ذریعہ دستخط شدہ اور بینک کو فراہم کردہ تحریری اسٹاپ ادائیگی کی ہدایات پر عمل کرے گا۔اگر سوال کے انسٹرومنٹ کو ختم کرنے کے بعد بینک کو ادائیگی کی روک تھام کی ہدایات موصول ہوجاتی ہیں تو ، بینک اس کے مطابق کسٹمر کو مطلع کرے گا اور مذکورہ اسٹاپ ادائیگی کی ہدایات کے سلسلے میں اس کی مزید ذمہ داری نہیں ہوگی۔ اگر ادائیگی کی ہدایات پر عمل درآمد نہ کیا گیا ہو تو ، اسی کی وصولی کی تاریخ سے شروع ہونے والے 6 ماہ کی مدت تک مؤثر ثابت ہوگاجس وقت بینک کو مذکورہ بالا معلومات یا ہدایات موصول ہوئیں اس کا تعین اور مکمل طور پر بینک کے ذریعہ تصدیق کی جائے گی اور اس طرح کا عمل کسٹمر پر پابند اور حتمی ہوگا۔
20.    ہولڈ میل انسٹڑکشن
کسٹمرز اپنے اکاؤنٹ (اکاؤنٹس) سے متعلق سٹیٹمنٹس ، مشوروں اور دیگر خط و کتابت کو بینک کے ساتھ برقرار رکھنے کے خواہاں نہیں ہیں ، ان کے دیئے گئے پتے پر بھیجے جائیں گے (ای ایس) بینک کو مناسب طریقے سے بھرا ہوا / دستخط شدہ ہولڈ میل معاوضہ پیش کریں گے۔بینک اپنی صوابدید کے مطابق ، کسٹمر کی تحریری درخواست پر ، "ہولڈ میل" کی سہولت فراہم کرسکتا ہے جس کے تحت بینک کسٹمر یا اس کے مستند مجاز ایجنٹ کے ذریعہ وقتا فوقتا کسٹمر سے متعلق اکاؤنٹ کے تمام مواصلات یا سٹیٹمنٹس جمع کرنے کے لئے برقرار رکھے گا ۔
غیر فعال اکاؤنٹس
اگر اکاؤنٹ 1 سال تک غیر فعال رہتا ہے ، یعنی اس مدت کے لئے کوئی ڈیبٹ ٹرانزیکشن نہیں ہوتا ہے۔ اکاؤنٹ کو غیر فعال / غیر فعال کے طور پر نشان زد کیا جائے گا۔غیر فعال اکاؤنٹ میں کارروائیوں کی اجازت نہیں ہوگی جب تک کہ کسٹمر کے ذریعہ کسٹمر کی اصل CNIC یا کسی دوسرے درست دستاویز (دستاویزات) / بینک کے ذریعہ وقتا فوقتا تجویز کردہ ضروریات کی پیش کش پر خصوصی طور پر درخواست نہ کی جائیں۔
19۔.    اَن کلیم ڈپازٹ اور انسٹرمنٹ
ایسی صورت میں جب اکاؤنٹ غیر فعال اور غیر دعویدار رہتا ہے اور / یا کوئی انسٹرومنٹ دس (10) سال یا اس سے زیادہ عرصے تک غیر دعویدار رہتا ہے تو اکاؤنٹ میں ظاہر ہونے والا کریڈٹ بیلنس اور / یا غیر دعویدارانسٹرمنٹ ایس بی پی کو بینکنگ کمپنیوں کا آرڈیننس ، 1962 سیکشن 31 کے مطابق منتقل کیا جائے گا۔

20۔.    متفرق
گورننگ لاء: یہ شرائط و ضوابط حکومت کی ہوں گی اور پاکستان کے بنیادی اور طریقہ کار کے قوانین کے تابع ہوں گی ، بشمول SBP اور/یا صوبائی یا وفاقی حکومت یا کسی دوسرے مقامی اتھارٹی یا باڈی کے تمام اطلاعات ، ہدایات ، سرکلر اور ضوابط ، اس طرح کے قوانین کی تعمیل کے لیے درکار حد تک ترمیم شدہ سمجھا جائے۔
بینک کی کوئی ذمہ داری نہیں: یہ واضح کیا گیا ہے کہ بینک کسی بھی ہدایت پر کسی تاخیر یا عدم عملدرآمد کی کوئی ذمہ داری قبول نہیں کرتا ہے سوائے اس کے کہ بینک کی جانب سے قائم کردہ مجموعی غفلت یا جان بوجھ کر برتاؤ کیا جائے۔ کسی بھی صورت میں ، مذکورہ بالا تعصب کے بغیر ، بینک کی زیادہ سے زیادہ ذمہ داری سود / مارک اپ یا ویلیو ڈیٹ ایڈجسٹمنٹ یا متعلقہ ادائیگی یا منتقلی کی ہدایات تک محدود ہوگی۔.
اکاؤنٹ کھولنے کی شکل میں مذکور شرائط و ضوابط کی تشریح کے سلسلے میں بینک اور کسٹمر کے مابین کسی تنازعہ کی صورت میں ، معاملہ حل کرنے کے لئے اسٹیٹ بینک آف پاکستان کو بھیجا جائے گا۔
21۔.    غیر فعال اکاؤنٹس
21.1 اگر اکاؤنٹ 1 سال تک غیر فعال رہتا ہے ، یعنی۔. اس مدت کے لئے کوئی ڈیبٹ ٹرانزیکشن نہیں ہوتا ہے۔ اکاؤنٹ کو غیر فعال / غیر فعال کے طور پر نشان زد کیا جائے گا۔. غیر فعال اکاؤنٹ میں کارروائیوں کی اجازت نہیں ہوگی جب تک کہ گاہک کے ذریعہ گاہک کی اصل CNIC یا کسی دوسرے درست دستاویز (دستاویزات) / بینک کے ذریعہ وقتا فوقتا تجویز کردہ ضروریات کی پیش کش پر خصوصی طور پر درخواست نہ کی جائے۔.
22۔.    دعویدار جمع اور سازو سامان۔
22.1 ایسی صورت میں جب اکاؤنٹ غیر فعال اور غیر دعویدار رہتا ہے اور / یا کوئی آلہ دس (10) سال یا اس سے زیادہ عرصے تک غیر دعویدار رہتا ہے تو اکاؤنٹ میں ظاہر ہونے والا کریڈٹ بیلنس اور / یا غیر دعویدار آلہ ایس بی پی کو سیکشن 31 کے مطابق منتقل کیا جائے گا۔ بینکنگ کمپنیوں کا آرڈیننس ، 1962۔.
23۔.    متفرق
23.1 گورننگ لاء: ان شرائط و ضوابط پر حکمرانی کی جائے گی اور وہ پاکستان کے ٹھوس اور طریقہ کار کے قوانین کے تابع ہوں گے۔, تمام اطلاعات سمیت۔, ہدایت, ایس بی پی اور / یا صوبائی یا وفاقی حکومت یا کسی دوسرے مقامی اتھارٹی یا ادارہ کے سرکلر اور قواعد و ضوابط۔, اس طرح کے قوانین کی تعمیل کے لئے درکار حد تک ترمیم کی جائے گی۔.
23.2 بینک کی کوئی ذمہ داری نہیں: یہ واضح کیا گیا ہے کہ بینک کسی بھی ہدایت پر کسی تاخیر یا عدم عملدرآمد کی کوئی ذمہ داری قبول نہیں کرتا ہے سوائے اس کے کہ بینک کی جانب سے قائم کردہ مجموعی غفلت یا جان بوجھ کر برتاؤ کیا جائے۔. کسی بھی صورت میں ، مذکورہ بالا تعصب کے بغیر ، بینک کی زیادہ سے زیادہ ذمہ داری سود / مارک اپ یا ویلیو ڈیٹ ایڈجسٹمنٹ یا متعلقہ ادائیگی یا منتقلی کی ہدایات تک محدود ہوگی۔.
23.3 اکاؤنٹ کھولنے کی شکل میں مذکور شرائط و ضوابط کی تشریح کے سلسلے میں بینک اور صارف کے مابین کسی تنازعہ کی صورت میں ، معاملہ حل کرنے کے لئے اسٹیٹ بینک آف پاکستان کو بھیجا جائے گا۔.